spot_img

Columns

News

قرآن کی قسم کھاتا ہوں کہ امریکہ کے ساتھ مل کر سازش کرنے کے الزامات جھوٹے ہیں، جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ

قرآن کی قسم کھاتا ہوں کہ نواز شریف کو ملک سے باہر بھجوانے میں میرا کوئی کردار نہیں تھا، عمران خان حکومت گرانے کیلئے امریکہ کے ساتھ مل کر سازش کے الزامات جھوٹے ہیں، میں نے ایکسٹینشن کیلئے کسی کو مجبور نہیں کیا تھا، اگر میں غلط بیانی کروں تو رسول اللّٰهﷺ کی شفاعت بھی نصیب نہ ہو۔

عمران خان اپنے ارادوں میں کامیاب ہو جاتا تو ہم سب آج قبروں میں ہوتے، رانا ثناء اللّٰہ

اسٹیبلشمنٹ نے پاکستان کو غیر مستحکم کیا، عمران خان اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ مل کر اپوزیشن کو ختم کر دینا چاہتا تھا، مسلم لیگ (ن) کو سادہ اکثریت ملتی تو حکومت نواز شریف کی لیڈرشپ میں بنتی، پاکستان کیلئے نواز شریف، اسٹیبلشمنٹ اور عمران خان کو مل کر بیٹھنا ہو گا۔

ضمنی انتخابات؛ مسلم لیگ (ن) نے میدان مار لیا

ضمنی انتخابات میں پاکستان مسلم لیگ (ن) نے فتح سمیٹ لی، حکمراں جماعت قومی اسمبلی کی 2 جبکہ پنجاب اسمبلی کی 7 نشستوں پر کامیاب، مسلم لیگ (ق) اور استحکامِ پاکستان پارٹی صوبائی اسمبلی کی ایک ایک نشست پر کامیاب۔

امریکہ کا فلسطین کے خلاف ویٹو استعمال کرنا مایوس کن، افسوسناک اور شرمناک ہے، فلسطینی صدر محمود عباس

اقوامِ متحدہ میں فلسطین کی مکمل رکنیت کے خلاف امریکی ویٹو شرمناک اور بلاجواز ہے، امریکی ویٹو فلسطینیوں کے حقوق، تاریخ، زمین اور مقدسات کیخلاف صریح جارحیت ہے، فلسطینی قیادت امریکہ کے ساتھ تعلقات پر نظرِ ثانی کرے گی۔

بتایا جائے کہ خیبرپختونخوا، بلوچستان اور سندھ کی اسمبلیاں کتنے میں خریدی گئیں؟ مولانا فضل الرحمٰن

الیکشن 2018 سے بڑی دھاندلی ہوئی ہے، ہم جعلی حکومت کو نہیں چلنے دیں گے، بتایا جائے بلوچستان، خیبرپختونخوا اور سندھ کی اسمبلیاں کتنے میں خریدی گئیں؟ پاکستان کو سیکولر سٹیٹ کی طرف دھکیلا جا رہا ہے، کوئی ہماری تحریک روک نہیں سکتا۔
spot_img
Analysisعمران خان کے دور حکومت میں پاکستان کو سیاسی جبر، خارجہ تعلقات...

عمران خان کے دور حکومت میں پاکستان کو سیاسی جبر، خارجہ تعلقات میں سرد مہری، سرمایہ کاری میں کمی، عدم استحکام اور دیوالیہ پن کا سامنا رہا: جرمن اخبار ڈیراشپیگل

نئے پاکستان کے نعرے کے ساتھ آنے والے عمران خان کے دور حکومت میں پاکستان کو سیاسی جبر،خارجہ تعلقات میں سرد مہری، سرمایہ کاری میں کمی، عدم استحکام اور دیوالیہ پن کا سامنا رہا۔ اقتدار سے عدم اعتماد کے ذریعہ نکالے جانے کے بعد عمران خان نے ملک میں افراتفری برپا رکھی جس سے بحران کا شکار ملک مزید غیر مستحکم ہورہا ہے

spot_img

برلن—جرمن اخبار ڈیراشپیگل کی مطابق خاتون صحافی سوزان کولبل نے 13 اپریل 2023 کو چیئرمین تحریکِ انصاف عمران خان سے ایک ویڈیو انٹرویو لیا۔ اس حوالہ سے شائع ہونے والے آرٹیکل میں لکھا گیا ہے کہ سابق کرکٹر اور پلے بوائے عمران خان کے پاس عورتوں، دولت اور شہرت کی کمی نہیں رہی، وہ ایک صوفی گرو سے متاثر ہوئے جو کہ دنیا سے رخصت ہو چکا ہے اور اب عمران خان پاکستان کو غربت، بدعنوانی اور اشرافیہ سے نجات دلانا چاہتے ہیں اور اس تنقید کو مسترد کرتے ہیں کہ ان کی وجہ سے پاکستان غیر مستحکم ہو رہا ہے۔

اس انٹرویو کے حوالہ سے ڈیراشپیگل میں شائع ہونے والے آرٹیکل کے مطابق عمران خان پاکستان میں خفیہ طور پر ملکی ڈوریں ہلانے والی فوجی قیادت کی آشیرباد سے 2018 میں وزیراعظم بنے لیکن ان کا دورِ حکومت سیاسی جبر، سفارتی سطح پر ناکامی اور سرمایہ کاری نہ ہونے کے حوالہ سے یاد رکھا جاتا ہے، عمران خان کے آرمی چیف سے تعلقات خراب ہوئے اور طاقتور فوج نے ان کی پشت پناہی سے ہاتھ روک لیا، بالآخر تحریکِ عدم اعتماد کے ذریعہ عمران خان کو اپریل 2022 میں اقتدار سے بےدخل ہونا پڑا اور تب اپوزیشن لیڈر رہنے والے شہباز شریف آج پاکستان کے وزیراعظم ہیں لیکن 70 سالہ عمران خان بھی ہار ماننے کیلئے تیار نہیں ہیں۔

مبینہ طور پر ایک قاتلانہ حملہ میں چار گولیاں لگنے سے زخمی ہونے والے عمران خان سے ان کی صحت کے متعلق پوچھا گیا تو انہوں نے بتایا کہ وہ روزے سے ہیں اور روزہ صحت کیلئے بہترین چیز ہے۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ وہ اب چل تو سکتے ہیں لیکن تاحال دوڑنے کے قابل نہیں ہیں۔

سپریم کورٹ میں وفاقی حکومت کے خلاف کیس جیتنے اور انتخابات کی صورت میں ممکنہ طور پر دوبارہ برسرِ اقتدار آنے کے متعلق سوالوں کے جواب میں عمران خان کا کہنا تھا کہ قومی یا صوبائی اسمبلی تحلیل ہونے کے صورت میں آئین 90 روز میں انتخابات کے انعقاد کا حکم دیتا ہے مگر وفاقی حکومت سپریم کورٹ کے احکامات کو ماننے سے انکار کر رہی ہے کیونکہ وہ شکست سے خوفزدہ ہے اور جانتی ہے کہ میں دوبارہ حکومت میں آیا تو انہیں نہیں چھوڑوں گا۔

کارکنان کو سڑکوں پر لا کر ملک کو غیر مستحکم کرنے کے متعلق سوال کے جواب میں سابق وزیراعظم نے کہا کہ ان کے پاس کوئی دوسرا راستہ نہیں ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ پاکستان آج تاریخ کے بدترین معاشی بحران سے گزر رہا ہے۔ سوزان کولبل نے سوال پوچھا کہ تحریکِ انصاف کے دورِ حکومت میں بھی تو پاکستان دیوالیہ ہونے کی صورتحال سے گزر رہا تھا، جس پر عمران خان نے جواب دیا کہ اج ہم غربت کے حوالہ سے 50 سالوں کے بدترین دور سے گزر رہے ہیں، ہم دیوالیہ ہونے والے ہیں، وسیع پیمانے پر بےروزگاری، انڈسٹریز کے بند ہونے اور ایگریکلچر میں زوال کا خدشہ ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ ہمارے دور میں گروتھ ریٹ 6 فیصد تھا جو اب 0.4 فیصد پر آ چکا ہے۔

ڈیراشپیگل کی خاتون صحافی نے کہا کہ آپ کے دورِ حکومت سے موازنہ کیا جائے تو آج صحافیوں کے ساتھ نسبتاً نرم رویہ رکھا جا رہا ہے، عمران خان میزبان کی اس بات کا کوئی خاطر خواہ جواب نہ دے سکے اور صرف اتنا کہا کہ مجھے اچھی طرح سے یاد ہے کہ ہماری حکومت کو کیسے ختم کیا گیا۔

تحریکِ عدم اعتماد میں شکست کے حوالہ سے پوچھے گئے سوال کے جواب میں سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ پارلیمنٹ میں ہمارے 20 بندوں کو خریدا گیا جس کا ہمیں بعد میں علم ہوا اور پھر ہم نے احتجاج کیا۔

میزبان نے تحریکِ انصاف کے دورِ حکومت میں ہونے والے بڑے احتجاجی مظاہروں کا ذکر کیا تو عمران خان نے کہا کہ ہمارے خلاف تین احتجاجی مارچ ہوئے مگر ہم نے پولیس کو استعمال نہیں کیا جبکہ ہمارے احتجاجی مارچ کے خلاف طاقت کا استعمال کیا گیا کیونکہ شہباز شریف (وزیراعظم پاکستان) کو جنرل باجوہ اور ملٹری اسٹیبلشمنٹ کی حمایت حاصل رہی۔

سوال پوچھا گیا کہ کیا آپ کو ایسا نہیں لگتا کہ آپ پاکستان کو غیر مستحکم کر رہے ہیں؟ تحریکِ انصاف کے چیئرمین نے جواب دیا کہ بطور اپوزیشن ہمارا مشن احتجاجی ریلیاں نکالنا ہے تاکہ ہم اپنا مؤقف بیان کر سکیں اور حکومت پر تنقید کر سکیں مگر افراتفری تب پیدا ہوتی ہے جب حکومت ہمارے پرامن احتجاج کے خلاف طاقت کا استعمال کرتی ہے۔

عمران خان کے خلاف عدالتوں میں دہشتگردی اور فسادات کیلئے اکسانے سمیت 143 الزامات کے متعلق سوال کے جواب میں سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ یہ تقریباً ایک عالمی ریکارڈ ہے حتیٰ کہ 14 مارچ کو ان گنت پولیس اہلکار ہمارے راستے میں کھڑے ہو گئے اور ایک غیر قانونی سرچ وارنٹ کے ساتھ میرے گھر پر حملہ کیا گیا۔ لیکن تب آپ کہیں نظر کیوں نہیں آ رہے تھے؟ میزبان نے سوال پوچھا جس پر عمران خان نے جواب دیا کہ سیکیورٹی وجوہات کی بناء پر عدالت میں پیش نہیں ہو سکا۔

خاتون جرنلسٹ نے سوال پوچھا کہ بہت سارے الزامات ایسے ہیں جن کی وجہ سے آپ کو عوام کی نمائندگی کیلئے نااہل بھی قرار دیا جا سکتا ہے، ان میں سے ایک یہ الزام بھی ہے کہ آپ نے سعودی عرب کے ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کی جانب سے پاکستان کیلئے بطور تحفہ ملنے والی قیمتی گھڑی کو انتہائی کم قیمت پر خرید کر مہنگے داموں فروخت کر دیا، یہ کیا ماجرا ہے؟
عمران خان نے جواب دیا کہ ایک سرکاری ملازم 50 فیصد قیمت ادا کر کے کوئی بھی تحفہ خرید سکتا ہے، میں نے وہ گھڑی بیچ کر اپنے گھر کی جانب آنے والی سڑک تعمیر کروائی جو کہ اچھی حالت میں نہیں تھی۔ انہوں نے مزید کہا کہ نواز شریف اور آصف زرداری کوئی قیمت ادا کیے بغیر مہنگی گاڑیاں استعمال کرتے رہے مگر ان سے کوئی سوال نہیں پوچھا جاتا۔

میزبان جرنلسٹ نے سوال پوچھا کہ آپ ایک بحران زدہ ملک کو مستحکم کیوں نہیں ہونے دیتے؟ آپ انتقالِ اقتدار کیلئے موسم خزاں (عام انتخابات کے مقررہ وقت) کا انتظار کیوں نہیں کر سکتے؟ سابق وزیراعظم نے جواب میں کہا کہ اس کی وجہ ناقابلِ برداشت کرپشن ہے، موجودہ وزیراعظم اور اس کے بیٹا کا عدالت میں منی لانڈرنگ کے حوالہ سے ٹرائل جاری تھا مگر وہ سابق آرمی چیف (جنرل قمر جاوید باجوہ) کے ساتھ ایک ڈیل کے تحت حکومت میں آ گئے کیونکہ جنرل باجوہ مزید ایکسٹینشن (مدتِ ملازمت میں توسیع) چاہتے تھے۔

مبینہ قاتلانہ حملہ، ممکنہ نااہلی اور ممکنہ گرفتاری کے متعلق پوچھے گئے ایک سوال کے جواب میں چیئرمین تحریکِ انصاف کا کہنا تھا کہ میرے مخالفین دوبارہ مجھے قتل کرنے کی کوشش کریں گے۔ انٹیلیجینس چیف، وزیراعظم شہباز شریف اور وزیرِ داخلہ رانا ثناء اللّٰہ مجھے قتل کروانا چاہتے ہیں۔ میں احتیاطی تدابیر اختیار کر رہا ہوں مگر وہ لوگ بہت طاقتور ہیں۔

Der Spiegel’s report can be read here.

Read more

میاں نواز شریف! یہ ملک بہت بدل چکا ہے

مسلم لیگ ن کے لوگوں پر جب عتاب ٹوٹا تو وہ ’نیویں نیویں‘ ہو کر مزاحمت کے دور میں مفاہمت کا پرچم گیٹ نمبر 4 کے سامنے لہرانے لگے۔ بہت سوں نے وزارتیں سنبھالیں اور سلیوٹ کرنے ’بڑے گھر‘ پہنچ گئے۔ بہت سے لوگ کارکنوں کو کوٹ لکھپت جیل کے باہر مظاہروں سے چوری چھپے منع کرتے رہے۔ بہت سے لوگ مریم نواز کو لیڈر تسیلم کرنے سے منکر رہے اور نواز شریف کی بیٹی کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے۔

Celebrity sufferings

Reham Khan details her explosive marriage with Imran Khan and the challenges she endured during this difficult time.

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
spot_img
Subscribe
Notify of
guest
1 Comment
Oldest
Newest Most Voted
Inline Feedbacks
View all comments
Nasreen
Nasreen
1 year ago

He is addict power lier and organized paid from outside to devote Pakistan he will arrange by outside

error: