spot_img

Columns

News

پاک فوج نے جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف انکوائری کا آغاز کر دیا

پاک فوج نے سابق ڈائریکٹر جنرل آئی ایس آئی جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف نجی ہاوسنگ سوسائٹی کے مالک کی درخواست پر انکوائری کا آغاز کر دیا ہے، جنرل (ر) فیض حمید پر الزام ہے کہ انہوں نے نجی ہاؤسنگ سوسائٹی کے خلاف دورانِ ملازمت اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال کیا تھا۔

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، شیر افضل مروت

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، سعودی عرب اور امریکہ دو ممالک تھے جن کے تعاون سے رجیم چینج آپریشن مکمل ہوا، سعودی عرب کی جانب سے پاکستان کیلئے معاشی تعاون بھی اسی پلاننگ کا حصہ ہے۔راہنما تحریکِ انصاف شیر افضل مروت

فیض آباد دھرنا کمیشن ایک مذاق تھا، اس کمیشن کی کوئی وقعت نہیں ہے۔ وزیرِ دفاع خواجہ آصف

جنرل (ر) باجوہ نے مجھے دھمکی دی ہے کہ میں نے باتیں بیان کیں تو ٹانگوں پر کھڑا نہ ہو سکوں گا، جنرل (ر) باجوہ اور جنرل (ر) فیض حمید فیض آباد دھرنا کمیشن میں پیش نہیں ہوئے، فیض آباد دھرنا کمیشن ایک مذاق تھا، اس کمیشن کی کوئی وقعت نہیں ہے۔

سعودی عرب پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا، سعودی وزیرِ خارجہ شہزادہ فیصل

سعودی عرب پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا، جلد سرمایہ کاری میں پیش رفت ہو گی۔ سعودی وزیرِ خارجہسعودی عرب کی جانب سے بڑی سرمایہ کاری کا خیر مقدم کرتے ہیں، سعودی سرمایہ کاروں کو تمام سہولیات فراہم کی جائیں گی۔ وزیرِ خارجہ اسحاق ڈار

جنرل (ر) باجوہ میرے خلاف ہیروئن کے جعلی کیس میں براہِ راست ملوث تھا، رانا ثناء اللّٰہ

میرے خلاف ہیروئن کے جعلی کیس میں جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ براہِ راست ملوث تھا، عمران خان نے پارلیمنٹ کی منظوری کے بغیر اگست میں ہی جنرل (ر) باجوہ کو توسیع دے دی تھی، میاں نواز شریف نے کہا کہ اب محاذ آرائی بےسود ہے۔
spot_img
Analysisمیری گرفتاری پر ایسا ردعمل آنا ہی تھا، مجھے فوج نے آرمی...

میری گرفتاری پر ایسا ردعمل آنا ہی تھا، مجھے فوج نے آرمی چیف کے کہنے پر گرفتار کروایا، عمران خان کا وائس آف امریکہ کو انٹرویو

میرے حامیوں کو معلوم ہے کہ مجھے قتل کرنے کی کوشش کی گئی تھی اور اس کے پیچھے حکومت کا ہاتھ تھا جبکہ اس واقعہ کی تحقیقات بھی نہیں کی گئیں۔جب مجھے فوج نے اغواء کروایا تو ایسا سخت ردعمل تو آنا ہی تھا۔

spot_img

واشنگٹن/لاہور—امریکی خبر رساں ادارہ “وائس آف امریکہ” کی خاتون صحافی سارہ زمان نے پاکستان میں تحریکِ انصاف کے چیئرمین عمران خان سے بذریعہ سکائپ انٹرویو لیا جبکہ عمران خان لاہور میں اپنی رہائش گاہ پر موجود تھے۔ وائس آف امریکہ کے مطابق عمران خان پاکستان کی فوج کے سربراہ جنرل عاصم منیر پر اپنی سیاسی مشکلات کے حوالہ سے سنگین الزامات عائد کرتے رہے ہیں مگر اب عمران خان کہتے ہیں کہ انہیں آرمی چیف سے کوئی بھی مسئلہ نہیں ہے۔

وائس آف امریکہ نے عمران خان سے 9 مئی کو احاطہ عدالت سے ان کی گرفتاری، عدالتی کارروائی، گرفتاری سے انکار کی وجوہات، تین دن تک جاری رہنے والے پرتشدد واقعات اور عمران خان کے مؤقف اور بیانیہ کے متعلق کچھ سوالات پوچھے۔

خاتون صحافی نے سوال پوچھا؛ آپ گرفتاری سے قبل یہ کہتے رہے ہیں کہ اگر آپ کو کچھ ہوا تو ملک میں تشدد ہو گا اور آپ کے سپورٹرز کسی کو بھی نہیں چھوڑیں گے، کیا آپ اب اپنی گرفتاری پر ان پرتشدد واقعات کی ذمہ داری قبول کرتے ہیں؟
عمران خان نے جواب دیتے ہوئے ذمہ داری قبول کرنے سے انکار تو کیا مگر ساتھ ہی یہ مؤقف بھی اختیار کیا کہ جب مجھے مارنے کی کوشش کی گئی تب ہر طرف آگ تو لگنا ہی تھی اور عمارتوں کو بھی جلایا جانا تھا لیکن ایسا نہیں ہوا۔ عمران خان نے مزید کہا کہ جب مجھے فوج نے اغواء کروایا تو ایسا سخت ردعمل تو آنا ہی تھا۔

میزبان نے سوال پوچھا کہ آپ کئی بار جارحانہ زبان استعمال کر چکے ہیں، کیا آپ کو نہیں لگتا کہ جب ایک لیڈر ایسی زبان استعمال کرتا ہے تو اس کے فالورز باہر نکلنا اور باہر نکل کر کچھ بھی کرنا اپنا حق سمجھنے لگتے ہیں؟
عمران خان نے جواب دیا کہ یہ سچ نہیں ہے، اگر یہ سچ ہے تو انہوں نے پہلے ایسا کیوں نہیں کیا، 27 برس تک انہوں نے ایسا کیوں نہیں کیا؟

سارہ زمان نے استفسار کیا کہ مارچ کے وسط میں جب میری آپ سے گفتگو ہوئی تب حکام وارنٹ سمیت آپ کو گرفتار کرنے آئے تھے مگر آپ کی جماعت کے کارکنان باہر پہنچے اور پولیس پر حملہ کر دیا جبکہ آپ کی جماعت کی جانب سے بھی سوشل میڈیا پر بار بار کارکنان کو وہاں پہنچنے کی ہدایات جاری کی گئیں، آپ کی جماعت آخر کیا چاہتی ہے؟
عمران خان نے جواب دیا کہ میرے حامیوں کو معلوم ہے کہ مجھے قتل کرنے کی کوشش کی گئی تھی اور اس کے پیچھے حکومت کا ہاتھ تھا جبکہ اس واقعہ کی تحقیقات بھی نہیں کی گئیں۔

عمران خان کے اس جواب پر خاتون جرنلسٹ نے کہا کہ آپ نے بھی تو اپنے حامیوں کو ایسا کوئی ثبوت فراہم نہیں کیا، اس پر عمران خان کا کہنا تھا کہ جب کوئی تفتیش ہی نہیں ہوئی تو میں ثبوت کہاں سے لاؤں؟ مجھے جس پر شک ہے، اس سے تفتیش ہونی چاہیے اور وہ خود کو بےگناہ ثابت کرے۔

تحریکِ انصاف کے چیئرمین نے کہا کہ میں کئی بار یہ کہہ چکا ہوں کہ اگر وہ وارنٹ ساتھ لے کر آئیں تو میں خود کو گرفتاری کیلئے پیش کر دوں گا۔
عمران خان کے اس بیان پر میزبان جرنلسٹ نے سوال اٹھایا کہ جب حکام آپ کی گرفتاری کیلئے مارچ کے وسط میں وارنٹ ہمراہ لائے تھے تو آپ نے گرفتاری کیوں پیش نہ کی؟
عمران خان نے جواب دیا کہ وہ غیر قانونی تھا، آپ دیکھ رہے ہیں کہ تحریکِ انصاف کے خلاف کریک ڈاؤن کیا جا رہا ہے اور اس کا مقصد ہمیں الیکشن کیلئے کمزور کرنا ہے۔

وائس آف امریکہ کی نمائندہ جرنلسٹ نے عمران خان کو یاد دلایا کہ جب وہ حکومت میں تھے اور اس وقت کی اپوزیشن فوج پر سیاسی مداخلت کے باعث تنقید کرتی تھی تو آپ اس تنقید کو ریاست سے غداری قرار دیتے تھے جبکہ آج کل آپ خود آرمی چیف کے خلاف جارحانہ گفتگو کرتے ہیں تو کیا اب آپ کی یہ تنقید غداری نہیں ہے؟
عمران خان نے جواب دیا کہ نواز شریف اور مریم نواز کے خلاف سپریم کورٹ میں دو برس تک کیس چلتا رہا اور ایک مشترکہ تحقیقاتی کمیٹی نے انہیں قصوروار پایا مگر وہ اپنی سزاؤں کی وجہ سے ججز اور آرمی چیف پر الزامات عائد کرتے تھے جو کہ غلط تھا جبکہ مجھے فوج نے اسلام آباد ہائی کورٹ سے اغواء کروایا جو کہ آرمی چیف کی اجازت کے بغیر ممکن نہیں لہذا میں نے آرمی چیف کا نام لیا۔
میزبان جرنلسٹ نے سوال اٹھایا کہ آپ کو کیوں یہ فرق نظر نہیں آ رہا کہ آپ کی تنقید جائز ہے مگر کسی دوسرے شخص کی تنقید غداری ہے؟ جس طرح آپ کے پاس کچھ وجوہات ہیں، یقیناً دوسروں کے پاس بھی کچھ وجوہات تھیں۔
عمران خان نے جواب دیا؛ ان دونوں کا موازنہ نہیں کیا جا سکتا، نواز شریف کو سپریم کورٹ نے سزا سنائی جبکہ میرے اغواء کو سپریم کورٹ نے غیر قانونی قرار دیا۔

وائس آف امریکہ کی نمائندہ کی جانب سے پوچھا گیا آخری سوال یہ تھا کہ آپ فوج کی اعلیٰ قیادت کے ساتھ تعلقات کو کیسے ٹھیک کرنے کی توقع رکھتے ہیں؟
سابق وزیراعظم کا کہنا تھا کہ مجھے آرمی چیف سے کبھی بھی کوئی مسئلہ نہیں رہا، وہ میرے بارے میں باتیں کرتے رہتے ہیں جو کہ درست نہیں ہوتیں جبکہ میں کئی بار ان سے رابطے کی کوشش کر چکا ہوں، مسئلہ میری طرف سے نہیں بلکہ دوسری طرف سے ہے۔
انہوں نے مزید کہا کہ میں نہیں جانتا کہ آرمی چیف کے ذہن میں کیا چل رہا پے اور کیوں آرمی چیف نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ وہ مجھے کبھی اقتدار میں نہیں آنے دیں گے۔

Read more

میاں نواز شریف! یہ ملک بہت بدل چکا ہے

مسلم لیگ ن کے لوگوں پر جب عتاب ٹوٹا تو وہ ’نیویں نیویں‘ ہو کر مزاحمت کے دور میں مفاہمت کا پرچم گیٹ نمبر 4 کے سامنے لہرانے لگے۔ بہت سوں نے وزارتیں سنبھالیں اور سلیوٹ کرنے ’بڑے گھر‘ پہنچ گئے۔ بہت سے لوگ کارکنوں کو کوٹ لکھپت جیل کے باہر مظاہروں سے چوری چھپے منع کرتے رہے۔ بہت سے لوگ مریم نواز کو لیڈر تسیلم کرنے سے منکر رہے اور نواز شریف کی بیٹی کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے۔

Celebrity sufferings

Reham Khan details her explosive marriage with Imran Khan and the challenges she endured during this difficult time.

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
spot_img
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
error: