Columns

News

پاکستان اور آذربائجان کے مابین جے ایف 17 لڑاکا طیاروں کا تاریخی معاہدہ طے پا گیا

پاکستان اور آذربائجان کی فضائیہ کے مابین 1 اعشاریہ 6 ارب ڈالرز میں جے ایف 17 سی بلاک تھری لڑاکا طیاروں کا ایک بڑا اور تاریخی برآمدی معاہدہ طے پا گیا ہے جبکہ اس معاہدہ میں طیارے، تربیت اور گولہ بارود شامل ہیں۔

مسلم لیگ (ن) قومی اسمبلی میں 108 ارکان کے ساتھ سب سے بڑی جماعت بن گئی

مسلم لیگ (ن) قومی اسمبلی میں سب سے بڑی جماعت، مسلم لیگ (ن) کو 24 جبکہ پیپلز پارٹی کو 14 مخصوص و اقلیتی نشستیں الاٹ، مسلم لیگ (ن) کے ارکان کی مجموعی تعداد 108 جبکہ پیپلز پارٹی کے ارکان کی مجموعی تعداد 68 ہو گئی، سنی اتحاد کونسل کے 81 ارکان ہیں۔

پنجاب کی نامزد وزیراعلی مریم نواز نے اسمبلی رکنیت کا حلف اٹھا لیا

پنجاب کی نامزد خاتون وزیراعلی مریم نواز نے پنجاب اسمبلی کی رکنیت کا حلف اٹھا لیا ہے۔ مریم نواز کا کہنا ہے کہ وہ امید کرتی ہیں کہ اب پنجاب میں خدمت کے ایک نئے دور کا آغاز ہوگا۔

سابق کمشنر راولپنڈی لیاقت چٹھہ نے غلط بیانی کا اعتراف کرتے ہوئے قوم سے معافی مانگ لی

میں نے ایک سیاسی جماعت کے بہکانے پر غلط بیان دیا تھا جو صریحاً غیر ذمہ دارانہ عمل تھا، اس منصوبے کو ایک سیاسی جماعت کی بھرپور حمایت حاصل ہے، چیف جسٹس کا نام جان بوجھ کر شامل کیا گیا، قوم سے معافی چاہتا ہوں۔

حضرت محمدﷺ اللّٰه کے آخری نبی ہیں اور انکو تمام جہانوں کیلئے رحمت بنا کر بھیجا گیا ہے، چیف جسٹس قاضی فائز عیسیٰ

نبی آخر الزماں حضرت محمدﷺ کو تمام جہانوں کیلئے رحمت بنا کر بھیجا گیا ہے، آپﷺ صرف مسلمانوں کیلئے نہیں بلکہ تمام انسانوں سمیت اللّٰه کی تمام مخلوقات کیلئے بھی رحمت ہیں، آپﷺ کے بعد اب کوئی نبی اور رسول نہیں آئے گا اور اسکے بعد بات ختم ہوجاتی ہے۔
Analysisعمران خان سیاسی تنہائی کا شکار ہو چکے ہیں، امریکی اخبار دی...

عمران خان سیاسی تنہائی کا شکار ہو چکے ہیں، امریکی اخبار دی واشنگٹن پوسٹ

دی واشنگٹن پوسٹ کے مطابق عمران خان سیاسی طور پر تنہائی کا شکار ہیں، وہ سوشل میڈیا پر ”کی بورڈ وارئیر“ بن کر رہ گئے ہیں جبکہ تحریکِ انصاف انہدام کی طرف گامزن ہے۔

spot_img

واشنگٹن—واشنگٹن میں قائم امریکی اخبار ”دی واشنگٹن پوسٹ“ میں 28 مئی کو شائع ہونے والے آرٹیکل میں یہ دعویٰ کیا گیا ہے کہ تحریکِ انصاف کے چیئرمین عمران خان کی رواں ماہ گرفتاری نے پورے پاکستان میں فسادات کو جنم دیا جس کے بعد اب عمران خان تنہائی کا شکار نظر آتے ہیں کیونکہ ان کے حامی اور معاونین فوج کا دباؤ برداشت نہیں کر سکے اور عمران خان کی جماعت انہدام کے خطرات میں گھری ہوئی ہے، ایک ہفتہ سے بھی کم وقت میں “تحریکِ انصاف” کو بریک لگانے پر مجبور کر دیا گیا ہے۔

دی واشنگٹن پوسٹ کے مطابق 70 سالہ عمران خان، جنہیں ایک سال قبل پارلیمنٹ نے تحریکِ عدم اعتماد کے ذریعہ اقتدار سے بےدخل کر دیا، نے جمعہ کے روز کہا کہ طاقتور پاکستانی فوج ایک فاشسٹ ادارہ بن چکی ہے جس نے غیر اعلانیہ مارشل لاء نافذ کر رکھا ہے۔ انہوں نے عدلیہ سے فوجی مداخلت کو روکنے کا بھی مطالبہ کیا۔

امریکی اخبار کے شائع کردہ آرٹیکل میں بتایا گیا ہے کہ بدعنوانی کے سنگین الزامات میں 9 مئی کو عمران خان کی گرفتاری پر احتجاجی مظاہروں میں فوجی تنصیبات اور قومی علامات کی توڑ پھوڑ اور جلاؤ گھیراؤ میں ملوث فسادیوں کو دہشتگرد قرار دیا جا چکا ہے جبکہ پولیس نے تحریکِ انصاف کے راہنماؤں اور سینکڑوں مظاہرین کو بھی حراست میں لے لیا ہے۔

دی واشنگٹن پوسٹ نے لکھا ہے کہ بدامنی کے واقعات کی روک تھام کیلئے صوبوں میں فوج کو طلب کر لیا گیا ہے جبکہ سویلین اتھارٹیز کی منظوری کے بعد فوجی تنصیبات پر حملہ کرنے والوں کے خلاف فوجی عدالتوں میں مقدمات چلانے کا فیصلہ ہو چکا ہے، یہ ایک ایسا قدم ہے جو صرف دہشتگردی کے سنگین حالات میں ہی اٹھایا جاتا ہے۔ دوسری جانب عمران خان اور اس کے معاونین پرتشدد واقعات کی منصوبہ بندی کے الزامات کی تردید کر چکے ہیں اور ان کا مؤقف ہے کہ تخریب کاری میں ملوث افراد کو ہمارے پرامن مظاہرین میں سازش کے تحت شامل کیا گیا تھا۔

آرٹیکل کے مطابق گزشتہ کچھ دنوں سے عمران خان کے معاونین اور دیرینہ ساتھیوں کی جانب سے پارٹی رکنیت سے مستعفی ہونے سے اعلانات سامنے آ رہے ہیں اور وہ گرفتاریوں سے خوفزدہ اور شکست خوردہ دکھائی دے رہے ہیں جبکہ انہوں نے فوجی تنصیبات پر حملوں، فوجی علامات کو نذرِ آتش کرنے اور فوج کے شہداء کی یادگاروں کو نقصان پہنچانے کے واقعات کی مذمت بھی کی ہے۔

عمران خان کے ایک قریبی ساتھی اور تحریکِ انصاف کے شریک بانی عمران اسماعیل نے انسدادِ دہشتگردی کی عدالت سے رہائی ملنے کے بعد عمران خان سے تعلقات ختم کرنے کا اعلان کیا اور کہا کہ وہ فوجی تنصیبات پر حملوں اور پرتشدد واقعات کی شدید مذمت کرتے ہیں۔ عمران خان کا ساتھ چھوڑنے والوں میں ایک اہم نام 57 سالہ شیریں مزاری کا بھی ہے جو عمران خان کی کابینہ میں انسانی حقوق کی وزیر کی حیثیت سے شامل رہ چکی ہیں، انہوں نے ایک پریس کانفرنس میں پرتشدد واقعات کی مذمت کی اور کہا کہ ان کی گرفتاری کی وجہ سے ان کے خاندان کو شدید پریشانی کا سامنا کرنا پڑا، انہوں نے اپنی ماں، بچوں اور اپنی صحت کو ترجیح قرار دیتے ہوئے سیاست چھوڑنے کا اعلان کیا۔

امریکی اخبار کے آرٹیکل میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ عمران خان کبھی جس فوج کے لاڈلے تھے، اب اس کی مخالفت کے نتائج بھی بھگت رہے ہیں اور اگرچہ انہیں جیل سے رہا کر دیا گیا ہے مگر ان کے گرد گھیرا بہت تنگ ہو رہا ہے، عمران خان کا خیال تھا کہ وہ سٹریٹ پاور کو استعمال کرتے ہوئے فوج کو گرا سکتے ہیں لیکن انہیں پرتشدد ہتھکنڈوں کے استعمال پر پچھتاوا ہو گا اور یہ کہ تحریکِ انصاف کے گرد سیکیورٹی فورسز کا شکنجہ ان سیاسی جماعتوں کیلئے بہت مفید ثابت ہو گا جنہوں نے عمران خان کو اقتدار سے باہر نکالا۔

دی واشنگٹن پوسٹ کے مطابق عمران خان نے جمعہ کے روز سیاسی و فوجی قیادت سے مذاکرات کی اپیل کی لیکن شاید اب بہت دیر ہو چکی ہے اور ان کی اس پیشکش کی قبولیت کا کوئی امکان نظر نہیں آ رہا۔ عمران خان اور ان کے درجنوں ساتھیوں کے بیرون ملک سفر پر پابندی عائد کی جا چکی ہے۔ عمران خان نے واشنگٹن سے بھی مدد مانگی ہے اور امریکی کانگریس کے کئی ارکان نے 9 مئی کو عمران خان کی گرفتاری پر پرتشدد واقعات کے بعد جاری گرفتاریوں اور مبینہ بدسلوکی کی مذمت کی ہے۔ سابق سیکریٹری آف اسٹیٹ اور سی آئی اے کے ڈائریکٹر مائیک پومپیو اور امریکی کانگریس کی خاتون رکن شیلا جیکسن اس حوالہ سے ٹویٹس بھی کر چکے ہیں۔

امریکی اخبار کا کہنا ہے کہ واشنگٹن میں عمران خان کیلئے ہمدردی اس وقت کم ہوئی تھی جب عمران خان نے اقتدار سے بےدخل ہونے پر یہ الزام عائد کیا کہ امریکہ نے ایک سازش کے تحت انہیں اقتدار سے نکلوایا اور پاکستان میں ایک امپورٹڈ حکومت تشکیل دینے میں کردار ادا کیا۔ امریکی حکام کی جانب سے ان الزامات کی تردید کی گئی اور بالآخر عمران خان بھی اپنے الزامات کا رخ پاکستان کے آرمی چیف کی جانب موڑتے ہوئے امریکی سازش کے بیانیہ سے پیچھے ہٹ گئے۔

دی واشنگٹن پوسٹ نے دعویٰ کیا ہے کہ عمران خان کو ابتدائی طور پر فوج کی خاموش حمایت حاصل تھی لیکن پھر عمران خان عفریت بن کر اپنے تخلیق کاروں کے خلاف ہو گئے۔ فوجی قیادت فی الحال ماضی کی طرح اقتدار میں براہِ راست مداخلت کرنے سے گریزاں ہے جبکہ عمران خان سوشل میڈیا پر صرف ایک “کی بورڈ وارئیر” بن کر رہ گئے ہیں اور ایسا لگتا ہے کہ اس عفریت کو قابو کر لیا گیا ہے۔

آرٹیکل میں لکھا گیا ہے کہ موجودہ سیاسی بحران نے اکتوبر میں ہونے والے عام انتخابات کے منصوبہ کو بھی غیر یقینی صورتحال میں دھکیل دیا ہے، شاید ملک کو کئی مہینوں تک منتخب راہنماؤں کے بغیر چھوڑ دیا جائے جبکہ قوم کو شدید اقتصادی چیلنجز کا بھی سامنا ہے۔ عمران خان کی پارٹی سے سینیر معاونین اور بااثر حامیوں کے مسلسل انحراف نے بھی غیر یقینی صورتحال کو مزید تقویت دی ہے، ماضی میں روایتی سیاسی جماعتوں کو چھوڑ کر عمران خان کی پاپولسٹ سیاسی جماعت میں داخل ہونے والے کچھ ساتھیوں نے اپنی پرانی جماعتوں میں واپس جانے کا اعلان کیا ہے جبکہ دیگر نے سیاست چھوڑنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔

تحریکِ انصاف کے سینیئر عہدیداروں، جمشید چیمہ اور مسرت چیمہ نے پارٹی چھوڑنے کا اعلان کرتے ہوئے صحافیوں کو بتایا کہ وہ فوجی تنصیبات پر حملوں کی وجہ سے پریشان ہیں، انہوں نے کہا کہ مظاہرین کو قابو نہ کرنا ہماری ناکامی تھی۔ جمشید کا کہنا تھا کہ وہ فوج کے شہداء کی علامات کی توڑ پھوڑ دیکھ کر غمگین ہیں۔

امریکی اخبار کے مطابق یہ کہنا قبل از وقت ہو گا کہ عمران خان کا سیاسی سفر اختتام کی جانب گامزن ہے تاہم فی الحال انہیں شریف حکومت کی جانب سے شدید مخالفت اور سیکیورٹی فورسز کے کریک ڈاؤن کا سامنا ہے۔

Read more

میاں نواز شریف! یہ ملک بہت بدل چکا ہے

مسلم لیگ ن کے لوگوں پر جب عتاب ٹوٹا تو وہ ’نیویں نیویں‘ ہو کر مزاحمت کے دور میں مفاہمت کا پرچم گیٹ نمبر 4 کے سامنے لہرانے لگے۔ بہت سوں نے وزارتیں سنبھالیں اور سلیوٹ کرنے ’بڑے گھر‘ پہنچ گئے۔ بہت سے لوگ کارکنوں کو کوٹ لکھپت جیل کے باہر مظاہروں سے چوری چھپے منع کرتے رہے۔ بہت سے لوگ مریم نواز کو لیڈر تسیلم کرنے سے منکر رہے اور نواز شریف کی بیٹی کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے۔

Celebrity sufferings

Reham Khan details her explosive marriage with Imran Khan and the challenges she endured during this difficult time.

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
spot_img
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
error: