spot_img

Columns

News

آئرش وزیراعظم نے فلسطین کو بطور ریاست تسلیم کرنے کا اعلان کر دیا

آئرلینڈ نے فلسطین کو بطور ریاست تسلیم کرنے کا اعلان کر دیا، ناورے اور سپین بھی فلسطین کو بطور ریاست تسلیم کر رہے ہیں جبکہ اسرائیل نے فوری طور پر آئرلینڈ اور ناروے سے اپنے سفیروں کو واپس بلا لیا ہے۔

سینیٹر فیصل واوڈا نے سینیٹ میں جسٹس اطہر من اللّٰہ کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کر دیا

جج اطہر من اللّٰہ نے مجھے پراکسی کہا، ایک جج کیسے یہ جرأت کر سکتا ہے کہ وہ سینیٹر کو پراکسی کہے؟ جج نے ایوان کی توہین کی ہے، میں سینیٹ سے اطہر من اللّٰہ کے خلاف کارروائی کا مطالبہ کرتا ہوں، سینیٹر فیصل واوڈا۔

عالمی عدالتِ انصاف نے بنجمن نیتن یاہو اور یحییٰ سنوار کے وارنٹ گرفتاری طلب کر لیے

عالمی عدالتِ انصاف (آئی سی سی) نے اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو، اسرائیلی وزیرِ دفاع یوو گیلنٹ اور حماس راہنماؤں یحییٰ سنوار، محمد دیاب المصیری و اسماعیل ہنیہ کے وارنٹ گرفتاری طلب کر لیے۔

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی ہیلی کاپٹر حادثے میں جاں بحق ہو گئے

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کا ہیلی کاپٹر ایرانی علاقہ آذربائیجان میں گر کر تباہ، حادثہ میں ایرانی صدر، وزیرِ خارجہ حسین امیر، مشرقی آذربائجان کے گورنر ملک رحمتی اور صوبہ میں ایرانی صدر کے نمائندے آیت اللہ علی سمیت تمام افراد جاں بحق ہو گئے۔

وزیرِ اعلٰی پنجاب مریم نواز شریف نے ’’نواز شریف آئی ٹی سٹی‘‘ کا سنگ بنیاد رکھ دیا

وزیر اعلٰی پنجاب مریم نواز شریف نے پاکستان کے پہلے انفارمیشن ٹیکنالوجی منصوبے ’’نواز شریف آئی ٹی سٹی‘‘ کا افتتاح کر دیا۔ آئی ٹی سٹی کا نام نواز شریف کے نام پر رکھا گیا ہے کیونکہ نواز شریف ہی جدید پاکستان کے بانی ہیں۔
spot_img
Analysisاسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو ایک گینگ لیڈر اور جھوٹا شخص ہے، اسرائیلی...

اسرائیلی وزیراعظم نیتن یاہو ایک گینگ لیڈر اور جھوٹا شخص ہے، اسرائیلی اخبار ہاریتز

اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو ایک گینگ لیڈر اور جھوٹا شخص ہے جو وزارتِ عظمیٰ کے منصب پر براجمان رہنے کے قابل نہیں ہے، بینجمن نیتن یاہو انتقام کی آگ میں اسرائیل کو تباہی کی جانب دھکیل رہا ہے۔

spot_img

تل ابیب (تھرسڈے ٹائمز) — اسرائیلی اخبار ”ہاریتز“ میں شائع ہونے والے ایک آرٹیکل میں اسرائیل کے موجودہ وزیراعظم بینجمن نیتن یاہو کو ایک گینگ لیڈر یعنی غنڈوں کا سربراہ قرار دیا گیا ہے جبکہ اسرائیلی اخبار میں یہ بھی لکھا گیا ہے کہ بینجمن نیتن یاہو وزارتِ عظمیٰ جیسے عہدے پر براجمان رہنے کے قابل نہیں ہیں۔

ہاریتز کے مطابق پیر کے روز اسرائیلی وزیراعظم نے ایک کھوکھلی تقریر میں کہا کہ ”ہم دشمن کے ساتھ جو کچھ کریں گے، وہ نسلوں تک گونجتا رہے گا“ حالانکہ بینجمن نیتن یاہو کو عہدے سے مستعفی ہو جانا چاہیے تھا جس طرح 1983 میں اس وقت کے اسرائیلی وزیراعظم مناخم بیگن نے لبنان پر حملے کے مضمرات کو مدنظر رکھتے ہوئے منصب سے سبکدوش ہونے کا اعلان کر دیا تھا اور پھر اسحاق شامیر نے وزارتِ عظمیٰ کا عہدہ سنبھالا جبکہ یہ تاثر بھی زائل ہوا کہ جنگ کے دوران وزیراعظم تبدیل نہیں کیا جا سکتا۔

اسرائیلی اخبار میں شائع ہونے والے آرٹیکل میں بینجمن نیتن یاہو کو ایک کرپٹ راہنما قرار دیتے ہوئے لکھا گیا ہے کہ اسرائیل کی باگ ڈور ایک بدعنوان شخص کے ہاتھ میں ہے جو چند روز قبل اپنی تمام تر کوششیں عدالتی بغاوت کیلئے صرف کر رہا تھا، اس نے مغربی حکومتوں کی مخالفت مول لی اور امریکی انتظامیہ کے ساتھ تعلقات کو بھی خراب کیا، بینجمن نیتن یاہو اسرائیلی فوج، شاباک (اسرائیلی سیکیورٹی ادارہ) اور عوام کی اکثریت کو بھی عوام کا دشمن قرار دے چکا ہے۔

ہاریتز کے مطابق بینجمن نیتن یاہو اسرائیل کو ایک ایسی جنگ کی جانب دھکیل رہا ہے کہ جس میں یہ بھی معلوم نہیں کہ اسرائیل کے اہداف کیا ہیں جبکہ اس جنگ کا کوئی مثبت نتیجہ برآمد ہونے کی کوئی توقع ہی نہیں ہے، بینجمن نیتن یاہو ایک ایسا وزیراعظم ہے جو ہنگامی طور پر قومی حکومت کی ضرورت کو بھی تسلیم نہیں کرتا اور سمجھتا ہے کہ کوئی بھی اس کی جگہ نہیں لے سکتا یعنی وہ خود کو ناقابلِ تلافی سمجھتا ہے۔

اسرائیلی اخبار نے لکھا ہے کہ بینجمن نیتن یاہو خود کو اس یوکرینی صدر ولادیمیر زیلنسکی سے تشبیہ دے رہے ہیں جو واقعی ایک لیڈر ہیں کیونکہ زیلنسکی نے ایک سپر پاور ”روس“ کے خلاف بہادری سے مقابلہ کیا ہے جبکہ بینجمن نیتن یاہو اسرائیل پر ہونے والے حالیہ حملوں کے نتیجہ میں ہونے والے نقصانات اور خوفناک ناکامی کی ذمہ داری قبول کرنے کی اخلاقی جرأت تک نہیں رکھتا۔

اسرائیل پر حماس کے حملوں سے کچھ دیر پہلے بینجمن نیتن یاہو عدالت کے ائیر کنڈیشنڈ کمرے میں اپنی سیاسی بقاء کی جنگ لڑ رہے تھے جبکہ سپریم کورٹ میں یہ معاملہ زیرِ بحث تھا کہ آیا بینجمن نیتن یاہو کو مفادات کے ٹکراؤ کے معاہدے کی خلاف ورزی پر نااہل قرار دیا جا سکتا ہے یا نہیں، وہ لاکھوں ووٹرز جنہوں نے 11 ماہ قبل ایک سازگار ماحول میں حکومتی اتحاد کو کنیست کی 64 نشستیں دیں وہ اپنے سینکڑوں رشتہ داروں کو کھو چکے ہیں، ان کے ہزاروں دوست زخمی ہوئے ہیں اور ان کے لواحقین ایک دہشت زدہ ماحول میں محفوظ کمروں میں قید پڑے ہیں کیونکہ انہوں نے یہ جاننے کی کوشش کی کہ ان کے پیاروں کے ساتھ کیا ہوا مگر تاحال انہیں کوئی جواب نہیں مل سکا جبکہ وہ یہ بھی نہیں جانتے کہ انہیں مزید کتنا انتظار کرنا پڑے گا۔

اسرائیلی اخبار نے سوال اٹھایا کہ کیا ان لاکھوں افراد کے ووٹس بینجمن نیتن یاہو کو ایک مطلق اور اٹل حق فراہم کرتے ہیں کہ وہ اب کسی منصوبہ بندی کے بغیر ہی اسرائیل کو ایک ایسی جنگ میں دھکیل دیں جس کا انجام وہ خود بھی نہیں جانتے؟

ہاریتز کے مطابق بینجمن نیتن یاہو ایک جھوٹا شخص ہے جس کے متعلق اب اس کے ووٹرز کی اکثریت کو بھی یہ احساس ہو چکا ہے کہ وہ ایک ایسا خود غرض انسان ہے جو صرف خود کو بچانے کی کوشش کر رہا ہے، ایک طرف بینجمن نیتن یاہو قومی اتحاد کی بات کرتا ہے لیکن یہ ایک ایسی بےہودہ دعوت ہے کہ جس کیلئے بینجمن نیتن یاہو خود یہ تعین کرتا ہے کہ کون اس قومی اتحاد میں شامل ہونے کیلئے مستحق ہے اور کون اس میں شامل نہیں ہو سکتا۔

اسرائیلی اخبار میں شائع ہونے والے آرٹیکل میں لکھا گیا ہے کہ بینجمن نیتن یاہو نے ایک طرف جمہوریت کے خلاف اپنی جنگ میں ریاست کے سر پر بندوق رکھی ہوئی ہے جبکہ دوسری جانب اب وہ انتقام کی آگ میں اسرائیل کو ایک دیوانہ وار جنگ میں جھونک رہا ہے، بینجمن نیتن یاہو کے اقدامات کا خمیازہ اسرائیل کی جمہوریت کو بھگتنا پڑے گا جبکہ یہ اقدامات اسرائیلی عوام کی زندگیوں کو بھی تباہ کر رہے ہیں۔

ہاریتز کے مطابق ایک سو سے زائد اسرائیلی تاحال غزہ پٹی میں قید ہیں جبکہ ان تک اسرائیل کے جنونی وزیرِ خزانہ کا یہ بیان بھی پہنچ چکا ہو گا جس میں ان قیدیوں کو اس ”مقدس جنگ“ کا ایسا ضمنی نقصان قرار دیا گیا ہے کہ جس کو شمار ہی نہیں کرنا چاہیے۔

تل ابیب میں قائم اسرائیلی اخبار ”ہاریتز“ کا کہنا ہے کہ بینجمن نیتن یاہو مکمل طور پر وزارتِ عظمیٰ کیلئے نااہل ہے، وہ اب اچانک ایک ایسا لیڈر نہیں بن سکتا کہ جس سے اسرائیل کے نقصانات کی ذمہ داری قبول کرنے کی توقعات وابستہ کی جا سکیں، بینجمن نیتن یاہو ایک گینگ لیڈر ہے جس سے یہ منصب اب چھیننا پڑے گا کیونکہ موجودہ جنگی حالات میں ایسے شخص کو ہر گز اسرائیل کا وزیراعظم نہیں رہنا چاہیے۔

Read more

میاں نواز شریف! یہ ملک بہت بدل چکا ہے

مسلم لیگ ن کے لوگوں پر جب عتاب ٹوٹا تو وہ ’نیویں نیویں‘ ہو کر مزاحمت کے دور میں مفاہمت کا پرچم گیٹ نمبر 4 کے سامنے لہرانے لگے۔ بہت سوں نے وزارتیں سنبھالیں اور سلیوٹ کرنے ’بڑے گھر‘ پہنچ گئے۔ بہت سے لوگ کارکنوں کو کوٹ لکھپت جیل کے باہر مظاہروں سے چوری چھپے منع کرتے رہے۔ بہت سے لوگ مریم نواز کو لیڈر تسیلم کرنے سے منکر رہے اور نواز شریف کی بیٹی کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے۔

Celebrity sufferings

Reham Khan details her explosive marriage with Imran Khan and the challenges she endured during this difficult time.

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
spot_img
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
error: