spot_img

Columns

Columns

News

مستقبل کا راستہ چن لیا ہے، موجودہ آئی ایم ایف پروگرام آخری ہو گا۔ وزیراعظم شہباز شریف

مستقبل کا راستہ چن لیا ہے، وعدہ کرتا ہوں موجودہ آئی ایم ایف پروگرام آخری ہو گا، ایسے اداروں کا خاتمہ کیا جائے گا جو پاکستان پر بوجھ بن چکے، ماضی میں جب بھی ترقی کا سفر شروع ہوا کوئی حادثہ ہو گیا۔

خطبہِ حج 1445 ہجری، امام شیخ ماہر بن حمد المعیقلی

اے لوگو! اللّٰه سے ڈرو جیسے اس سے ڈرنے کا حق ہے، اللّٰه تعالٰی اپنی ذات میں واحد ہے، تمام مسلمان ایک دوسرے کے بھائی ہیں، والدین کا نافرمان نہ دنیا میں کامیاب ہو گا نہ آخرت میں، اللّٰه نے شرک کو حرام کر دیا، فلسطین کے مسلمانوں کیلئے دعا کرتا ہوں۔

عید سے قبل پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں بڑی کمی کردی گئی

وزیراعظم شہباز شریف نے عید پر پیٹرول کی قیمت میں 10 روپے 20 پیسے اور ڈیزل کی قیمت میں 2 روپے 33 پیسے کمی کا اعلان کیا ہے۔ نئی قیمتیں آج رات 12 بجے سے نافذ ہوں گی۔ حکومت نے یکم جون کو بھی قیمتیں کم کی تھیں، جس سے عوام کو مجموعی طور پر 35 روپے کا ریلیف ملا ہے۔

عدلیہ میں اسٹیبلشمنٹ کی مداخلت کا خاتمہ جلد ہونے والا ہے، چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ

عدلیہ میں اسٹیبلشمنٹ کی مداخلت زیادہ ہے، یہ سلسلہ مولوی تمیز الدین کیس سے شروع ہوا، عدلیہ اس مداخلت کے خلاف جدوجہد کر رہی ہے اور جلد اس کا خاتمہ ہونے والا ہے، ایک جج کو کسی کا ڈر نہیں ہونا چاہیے۔

پاکستان اسٹاک مارکیٹ دنیا کی بہترین کارکردگی والی مارکیٹ بن گئی, امریکی جریدہ بلومبرگ

پاکستان اسٹاک مارکیٹ نے بہترین کارکردگی کی بنا پر ڈالر میں دنیا کی ٹاپ پرفارمر سٹاک مارکیٹ کا اعزاز حاصل کر لیا ہے، جس میں گزشتہ ایک برس کے دوران تقریباً دوگنا اضافہ ہوا ہے۔ اس اضافہ کو ملکی معیشت کے لیے مثبت اشارہ قرار دیا جا رہا ہے اور حکومتی اقدامات کی بدولت مستقبل میں مزید بہتری کی امید کی جا رہی ہے۔
Op-Edپینڈورا سے فیک نیوز تک
spot_img

پینڈورا سے فیک نیوز تک

Op-Ed
Op-Ed
Want to contribute to The Thursday Times? Get in touch with our submissions team! Email views@thursdaytimes.com
spot_img

پاناما پیپرز کے بعد ایک دفعہ پھر پوری دنیا میں ہلچل سی مچ گئی ہے کیونکہ اس دفعہ بین الاقوامی صحافتی تنظیم آئی سی آئی جے نے “پینڈورا پیپرز” کے نام پر نئے انکشافات کیے ہیں جس میں تقریباً سات سو پاکستانی ایسے ہیں جنہوں نے ملک سے باہر آف شور کمپنیاں بنائی ہوئی ہیں۔ ماضی میں حکمران جماعت نے جب پاناما پیپرز پر ہنگامہ برپا کیا تو اس وقت انکا ایک ہی مطالبہ ہوا کرتا تھا کہ وزیراعظم مستعفی ہو؛ جب تک وزیراعظم استعفٰی نہیں دیتا تو اس وقت تک شفاف تحقیقات نہیں ہوسکتیں۔ اس کے علاوہ جب بھی ملک میں کوئی حادثہ رونما ہوتا تو انکی تواتر کے ساتھ ایک ہی گردان میڈیا پر چل رہی ہوتی تھی کہ جب تک متعلقہ محکمے کا وزیر استعفٰی نہیں دیتا تو اس وقت تک شفاف تحقیقات نہیں ہوسکتیں۔ یہ وہ بیانات اور مطالبات تھے جو وزیراعظم عمران خان اپوزیشن کے بینچوں پر بیٹھ کر حکمران جماعت سے کیا کرتے تھے لیکن جب عمران خان صاحب اقتدار ہوگئے تو ہم نے دیکھا کہ وہ کس طریقے سے ایک ایک کرکے اپنے کیے گئے وعدوں سے پیچھے ہٹتے چلے گئے۔

عمران خان کو اپنی ماضی کی محرکات کو سامنے رکھتے ہوئے اس بار بھی پینڈورا پیپرز کا معاملہ عدالت میں لے کر جانا چاہئیے تھا کیونکہ اس بار انکی ساری کابینہ پینڈورا پیپرز میں نامزد ہوچکی ہے بجائے اس کے کہ عمران خان کچھ ایسا قدم اٹھاتے انہوں نے نیب، ایف آئی اے اور اینٹی کرپشن پر مشتمل ارکان کا ایک کمیشن بنا کر ہی بہتر سمجھا اور معاملات کو نارمل کرنے کی کوشش کی تاکہ گھر کی بات گھر تک ہی رہے لیکن اس کے برعکس اگر عمران خان یہ کیس ٹیسٹ میچ کے طور پر عدالت میں لے کر جاتے تو بظاہر انکے اتحادی ان سے ناراض ہو جاتے، حکومت ختم کرنے کی دھمکیاں دیتے رہتے اور آئے روز نت نئے مطالبات پیش کرتے، جس طرح گزشتہ چند مہینوں میں جہانگیر ترین کے ہم خیال پارٹی رہنماؤں نے مطالبات پیش کیے تھے۔

 پینڈورا پیپرز کی تحقیقات کے لیے جماعت اسلامی کی طرف سے پیش رفت دیکھنے کو ملی ہے جس میں انہوں نے سپریم کورٹ میں جانے کا اعلان کیا ہے اس کے علاوہ پاکستان مسلم لیگ ن جو پنجاب میں سب سے زیادہ مقبول ترین جماعت ہے اس نے بھی میڈیا کی حد تک بیانات جاری کیے ہیں بظاہر وہ اس پینڈورا پیپرز کے انکشافات پر یقین نہیں رکھتے کیونکہ وہ یہ سمجھتے ہیں کہ جس طرح سپریم کورٹ نے پانامہ کی بجائے اقامہ پر نواز شریف کو نا اہل کیا تھا تو ہم مزید اس ملک میں ایسا تماشا نہیں لگانا چاہتے جس سے پاکستانی قوم کا دھیان مہنگائی اور بیروزگاری سے ہٹ کر دوسری طرف ہو کیونکہ موجودہ حکومت کو پورے ملک میں مہنگائی اور بیروزگاری کا جس طرح سے سامنا ہے تو اس سے ہمیں یقین ہوتا ہے کہ شائد وہ آئندہ انتخابات میں ہمیں حکومتی بینچوں پر نظر نہ آئیں۔

عمران خان کی حکومت کو جتنا نقصان وزیر اطلاعات فواد چوہدری اور انکے مشیر شہباز گل نے اپنی زبان اور اپنے گھسے پٹے بیانات سے پہنچایا ہے تو شاید ہی تاریخ میں ہمیں ایسے کوئی وزیر، مشیر دیکھنے کو ملے ہوں جو اپنے ہی وزیراعظم کی جڑیں کھوکھلی کر رہے ہوں۔ فواد چوہدری نے سب سے پہلے فیک نیوز کے نام پر صحافی برادری کی زبان بندی کے لیے قانون لانے کی باتیں کیں جس سے پورے ملک کی صحافتی تنظیمیں اپنے حقوق کے لیے سڑکوں پر آ گئیں اور وزیراعظم عمران خان کو انکے صحافیوں کے ساتھ کیے گئے وعدوں کی بھی یاد دہانی کروائی جبکہ دوسری طرف وہ اپنے سوشل میڈیا پر جاری کیے گئے بیان میں فیک نیوز کو پرموٹ کرتے ہوئے نظر آتے ہیں کہ ” پینڈورا پیپرز میں مریم نواز کے صاحبزادے جنید صفدر کی پانچ آف شور کمپنیاں منظر عام پر آئی ہیں۔” جب اس نیوز کے بارے میں آئی سی آئی جے سے کنفرم کرنے کی کوشش کی گئی تو انہوں نے کہا کہ ایسی کوئی خبر ہم نے بریک نہیں کی اور نہ ہی ہمیں مریم نواز شریف کے صاحبزادے کے خلاف کوئی ثبوت ملا ہے بلکہ وزیر اطلاعات فیک نیوز پھیلا رہے ہیں۔ وزیر اطلاعات کے بعد پاکستان کے سرکاری ٹی وی چینل پی ٹی وی نیوز نے اپنی ہیڈ لائن میں مریم نواز شریف کے بیٹے کے خلاف خبر چلائی بلکہ اس کے بعد رفتہ رفتہ شہباز گل اور نجی ٹی وی چینلوں نے بھی اس خبر کو پھیلانے میں پہل کی۔ ایک نجی ٹی وی چینل کی اینکر نے شہباز گل سے یہاں تک مطالبہ کر دیا تھا کہ یہ خبر ہم آپ کے اوپر اور پی ٹی وی نیوز کے اوپر اعتماد کرتے ہوئے چلا رہے ہیں لہذا آپ ہماری لاج رکھ لیجئے گا لیکن جیسے ہی مریم نواز شریف نے اس جعلی اور من گھڑت خبروں کے خلاف عدالت جانے کا اعلان کیا تو سارے ٹی وی چینلز اپنی خبروں سے پیچھے ہٹنے لگے۔ مجھے انتہائی شرمندگی ہوتی ہے کہ کیا یہ وزراء فیک نیوز کے خلاف اسمبلی میں بل لیکر آئیں گے؟ یہ تو خود جعلی خبریں پھیلانے میں پیش پیش ہیں۔ جب پاکستان کا سرکاری ٹیلی ویژن ہی جھوٹی اور جعلی خبروں کا مرکز بن جائے تو صحافتی تنظیموں سے شکوے کس چیز کے ہو رہے تھے۔ آج وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ہمیں وہ نتائج دیکھنے کو مل رہے ہیں کہ یہ حکومت ایک آرڈیننس کی آڑ میں صحافیوں کی زبان بندی کروانا چاہتی تھی، یہ حکومت صحافیوں سے اپنی من مانی کی رپورٹنگ کروانا چاہتی تھی جسے صحافی برادری کے ساتھ ساتھ اپوزیشن جماعتوں کے قائدین نے اپنی فورس کے ساتھ اس بل کے خلاف میدان میں جدوجہد کی اور یہ جدوجہد تاریخ میں سنہری حروف سے لکھی جائے گی۔ آج پاکستان پوری دنیا میں تنہائی کا شکار ہے، کوئی بھی غیر ملکی سربراہ پاکستانی حکومت پر اعتماد کا اظہار کرنے کو تیار نہیں اور حکومت اس بات کا غصہ صحافیوں پر پابندیاں لگا کر نکالنا چاہتی ہے لیکن یاد رکھیں! صحافی برادری نے آمرانہ ادوار میں بھی اپنی جدوجہد کو جاری رکھا تھا اور آج بھی اسی توانائی کے ساتھ اپنی جدوجہد کو جاری رکھی ہوئی ہے اور انکے خلاف کی گئی ہر سازش دم گھٹنے کے ساتھ ہی اپنی موت آپ مر جائے گی۔

The contributor, Mian Mujeeb-ur-Rehman, is a chemical engineer who doubles as a columnist, having conducted research and crafted blogs for the past several years as a personality for various newspapers and websites throughout Pakistan. He can be found on Twitter here.


The views expressed by contributors are their own and are not those of The Thursday Times.

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments

Read more

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
error: