spot_img

Columns

Columns

News

تورطت المملكة العربية السعودية في مؤامرة للإطاحة بحكومة رئيس الوزراء السابق عمران خان، كما يزعم أحد المقربين من عمران خان

لقد أطاحت المملكة العربية السعودية بحكومة عمران خان، وكانت المملكة العربية السعودية والولايات المتحدة هما الدولتان اللتان اكتملت بدعمهما عملية تغيير النظام. كما أن الدعم الاقتصادي الذي تقدمه المملكة العربية السعودية لباكستان هو أيضًا جزء من نفس التخطيط، شير أفضل مروات۔

Pakistan grants 34 firms licenses to develop electric vehicles for its domestic market

Pakistan's Engineering Development Board has granted 34 licenses for electric vehicle manufacturing under its 2020-2025 policy, aiming to equip petrol stations with EV chargers and leverage global climate funds to promote clean transportation.

پاک فوج نے جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف انکوائری کا آغاز کر دیا

پاک فوج نے سابق ڈائریکٹر جنرل آئی ایس آئی جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف نجی ہاوسنگ سوسائٹی کے مالک کی درخواست پر انکوائری کا آغاز کر دیا ہے، جنرل (ر) فیض حمید پر الزام ہے کہ انہوں نے نجی ہاؤسنگ سوسائٹی کے خلاف دورانِ ملازمت اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال کیا تھا۔

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، شیر افضل مروت

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، سعودی عرب اور امریکہ دو ممالک تھے جن کے تعاون سے رجیم چینج آپریشن مکمل ہوا، سعودی عرب کی جانب سے پاکستان کیلئے معاشی تعاون بھی اسی پلاننگ کا حصہ ہے۔راہنما تحریکِ انصاف شیر افضل مروت
Opinionجلسہ کس کا بڑا تھا؟
spot_img

جلسہ کس کا بڑا تھا؟

Hammad Hassan
Hammad Hassan
Hammad Hassan has been a columnist for over twenty years, and currently writes for Jang.
spot_img

اکیس مئی کی شام کو پشاور میں مولانا فضل الرحمن کا جلسہ جاری تھا اور گھنٹہ بھر میں مولانا کو خطاب بھی کرنا تھا۔ ایک صحافی دوست کے ساتھ پروگرام یہی تھا کہ مولانا سے مل لیا جائے لیکن ایک ضروری کام کے پیش نظر واپس آنا پڑا. تاہم جلسے کے حجم اور موڈ کا اندازہ ہو چکا تھا۔ رات ڈیڑھ بجے میں نے ٹوئیٹ کیا کہ مولانا فضل الرحمن کا جلسہ عمران خان کے پچھلے جلسے سے کم از کم تین گنا بڑا تھا اور ٹوئیٹ کر کے سو گیا۔ صبح کو سوشل میڈیا پر نظر پڑی تو یہ ”خبر“ معمول سے کچھ زیادہ وائرل ہو گئی تھی۔ ظاہر ھے کہ ایک طرف اگر مولانا کے پیروکاروں سمیت عمران مخالف دوسری جماعتوں سے وابستہ سیاسی کارکن اس خبر کی داد و تحسین کر رھے تھے تو دوسری طرف عمران خان کے ھمدرد بھی حسب توقع گالم گلوچ پر اتر آئے تھے۔

اس دوران ایک مشہور ٹی وی چینل سے فون آیا اور تھوڑی دیر بعد ان کی ٹیم مائیک اور کیمرے سے لیس متعلقہ ٹوئیٹ پر ”وضاحت“ مانگنے گھر پہنچی تو جذبات کو دلیل بنانے کی بجائے میں نے ٹھوس ثبوتوں اور حقائق کو بنیاد بنا کر عمران خان اور مولانا فضل الرحمن کے جلسوں کا تقابل کرتے ہوئے کہا کہ۔

عمران خان کا جلسہ موٹروے ٹول پلازہ کے کنارے جس میدان میں ہوا اس میدان کا کل رقبہ پشاور کے ممتاز صحافی طارق آفاق کے مطابق ایک سو پانچ کنال ہے اور اتنے رقبے میں زیادہ سے زیادہ بیس سے پچیس ہزار تک لوگ سما سکتے ہیں تاہم میدان سے باہر بھی گنجائش موجود ہے۔ گویا چالیس ہزار تک سہولت دی جا سکتی ہے۔ دوسری بات یہ کہ عمران خان کا جلسہ روزوں میں نماز تراویح کے بعد منعقد ہوا تھا اور ظاہر ہے کہ نوجوانوں کو جلسے کی طرف کھینچنے کا یہ بہت مناسب وقت تھا کیونکہ اس وقت نوجوان عمومی طور پر بائیک ریس سے کرکٹ میچ تک کسی نہ کسی ہنگامے کی تلاش میں ہوتے ہیں۔ ہمیں یہ بھی یاد رکھنا ہوگا کہ اس جلسے کے لئے پی ٹی آئی کی صوبائی حکومت نے مختلف اضلاع سے گیارہ سو پولیس اہلکاروں کو بھی تعینات کیا تھا۔ جبکہ جلسہ موٹروے کے کنارے ہونے کے سبب اہم اضلاع (جہاں سے تحریک انصاف کو کثرت سے عوامی نمائندگی حاصل ھے) جن میں پشاور چارسدہ نوشہرہ مردان اور صوابی شامل ہیں کےلئے بہت حد تک قابل رسائی بھی تھا۔ جس کا بھر پور فائدہ بھی اٹھایا گیا۔ لیکن ان باتوں سے بالاتر عمران خان داد کے مستحق ہیں کہ وہ اپنے حلقہ اثر (یوتھ) کی نفسیات کابہت گہرا مشاھدہ رکھتے ہیں۔ اسی لئے وہ ایک جارحانہ رویہ بلکہ گالم گلوچ کے ساتھ ساتھ جلسوں میں ڈی جیز لائٹنگ اور ہیلی کیم کا فائدہ اٹھاتے ہوئے بری کارکردگی کے باوجود بھی اپنی مقبولیت گرنے نہیں دیتا۔ مختصر یہ کہ عمران خان کا جلسہ یقینا ایک کامیاب جلسہ تھا لیکن اس کا حجم چالیس ہزار سے اوپر ہرگز نہ تھا۔

اب آتے ہیں گزشتہ روز ہونے مولانا فضل الرحمن کے جلسے کی طرف جو بنیادی طور پر جلسہ نہیں بلکہ تحفظ حرمین کانفرنس ہی تھا۔ یا یوں کہہ لیں کہ اس کانفرنس کی آڑ میں اپنی سیاسی طاقت کا اظہار تھا۔ یہ جلسہ شہر سے ملحقہ علاقے پتنگ چوک (جسے کبوتر چوک بھی کہا جاتا ہے) میں منعقد ہوا۔ پتنگ چوک سے رنگ روڈ تک کم از کم تین کلومیٹر کا فاصلہ ھے اور یہ دو رویہ روڈ ہے جسے جلسہ گاہ بنایا گیا تھا۔ اس روڈ کی مجموعی چوڑائی تقریبا سو فٹ ھے۔ گویا یہ مجموعی رقبہ تقریبا دو سو کنال کا بنتا ھے جو موٹر وے والے میدان (جہاں عمران خان نے جلسہ کیا تھا) کی نسبت دگنا بڑا ہے۔ جبکہ پتنگ چوک والی روڈ سے ملحقہ ذیلی سڑکوں پر بھی ہزاروں کی تعداد میں جلسے کے شرکاء موجود تھے۔ یہی وہ ٹھوس حقائق اور شواہد تھے جو اس ٹوئیٹ کی بنیاد بنا اور انہی حقائق کو آگے چل کر میں میڈیا کے سامنے اپنی دلیل بھی بناتا رہا۔

لیکن اہم سوال یہ ہے کہ کئ گنا بڑا جلسہ کرنے کے باوجود پروپیگنڈے کے محاذ پر جمیعت علماء اسلام ( دوسرجماعتوں کو بھی) کو عمران خان کے مقابل ناکامی کا سامنا کیوں ہے؟ بدلتے ہوئے زمانے اور وقت کے تقاضوں کو مد نظر رکھتے ہوئے ایک جماعت اور اس کی لیڈر شپ آگے بڑھے تو یہ مقبولیت کے راستے کھلنے میں دیر نہیں لگتی۔ عمران خان کو داد دینی پڑے گی کہ اس نے نفسیاتی اور عملی طور پر ان تکنیک کا استعمال کیا اور تباہ کن کارکردگی کے باوجود بھی اپنے کارکنوں کو جذباتی سطح پر ہموار رکھا۔ عمران خان کی کل طاقت کیا ھے؟ ظاھر ھے کہ کارکردگی کے حوالے سے وہ ایک ناکام سیاسی لیڈر ہیں۔ لیکن وہ نوجوان طبقے کی نفسیات سے کھیلنے کا ہنر بخوبی جانتے ہیں۔ اور یہی ”ہنر“ اس کے رویئے میں اشتعال اور جلسوں میں ڈی جیز لائٹننگ ہیلی کیم میوزک خواتین اور(ان پر کیمروں کی زومنگ) کو جنم دیتا ھے۔ ان ”معاملات“ کو عمران خان خود ہی بہت باریک بینی کے ساتھ دیکھتا ہے۔ کیونکہ اسے معلوم ہے کہ اسی میں اس کی سیاسی کامیابیاں اور مقبولیت پوشیدہ ہیں۔

لیکن دوسری جماعتیں قدرے روایتی انداز سے کھیل رہے ہیں۔ جو مظبوط تنظیمی صلاحیت اور عوامی پذیرائی کے باوجود لائم لائٹ میں میرٹ کی مناسبت سے جگہ نہیں پاتے۔ میں اب بھی اپنی اس بات پر قائم ہوں کہ مولانا فضل الرحمن کا جلسہ عمران خان کے جلسے سے تین گنا بڑا تھا لیکن جدید تکنیک کے استعمال کے فقدان نے اس ”لہر“ کو قدرے عنقا کر دیااور یہ بہر حال جماعت کی تنظیمی ناکامی اور وڑن کے فقدان سے پھوٹا۔

میڈیا کے ساتھ ٹاپ لیڈر شپ کے روابط نہ ہونے کے برابر ہیں حتی کہ مولانا فضل الرحمن کا بیٹا اور بھائی بھی اس سلسلے میں خوفناک لا پرواھی کا مظاہرہ کرتے ہوئے ”دوسرے معاملات“ میں مصروف نظر آتے ہیں جن سے بھر حال بہت سی قیاس آرائیاں بھی جنم لیتی ہیں۔ اس سلسلے میں (میڈیا کے ساتھ روابط) تحریک انصاف کو جمیعت العلماء اسلام پر واضح برتری حاصل ہے۔ البتہ مولانا ذاتی طور پر اس حوالے سے حد درجہ حساس اور ذمہ دار ہیں۔ لیکن جب تمام تر ذمہ داریاں بھی پارٹی لیڈر کے کندھوں پر ڈالی جائیں اور ہر کوئی خود کو بری الذمہ سمجھتے ہوئے کہیں اور مصروف ہو جائے۔ تو پھر کامیاب ترین جلسے اور عوامی پذیرائی بھی پردہ اخفا میں چلی جاتی ہیں اور اس کے نتائج وھی نکلتے ہیں۔ جیسا کہ اگلے دن مولانا فضل الرحمن کی شدید محنت اور دلیر سیاست کے ساتھ ہوا۔

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments

Read more

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
error: