spot_img

Columns

Columns

News

پاک فوج نے جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف انکوائری کا آغاز کر دیا

پاک فوج نے سابق ڈائریکٹر جنرل آئی ایس آئی جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف نجی ہاوسنگ سوسائٹی کے مالک کی درخواست پر انکوائری کا آغاز کر دیا ہے، جنرل (ر) فیض حمید پر الزام ہے کہ انہوں نے نجی ہاؤسنگ سوسائٹی کے خلاف دورانِ ملازمت اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال کیا تھا۔

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، شیر افضل مروت

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، سعودی عرب اور امریکہ دو ممالک تھے جن کے تعاون سے رجیم چینج آپریشن مکمل ہوا، سعودی عرب کی جانب سے پاکستان کیلئے معاشی تعاون بھی اسی پلاننگ کا حصہ ہے۔راہنما تحریکِ انصاف شیر افضل مروت

فیض آباد دھرنا کمیشن ایک مذاق تھا، اس کمیشن کی کوئی وقعت نہیں ہے۔ وزیرِ دفاع خواجہ آصف

جنرل (ر) باجوہ نے مجھے دھمکی دی ہے کہ میں نے باتیں بیان کیں تو ٹانگوں پر کھڑا نہ ہو سکوں گا، جنرل (ر) باجوہ اور جنرل (ر) فیض حمید فیض آباد دھرنا کمیشن میں پیش نہیں ہوئے، فیض آباد دھرنا کمیشن ایک مذاق تھا، اس کمیشن کی کوئی وقعت نہیں ہے۔

سعودی عرب پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا، سعودی وزیرِ خارجہ شہزادہ فیصل

سعودی عرب پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا، جلد سرمایہ کاری میں پیش رفت ہو گی۔ سعودی وزیرِ خارجہسعودی عرب کی جانب سے بڑی سرمایہ کاری کا خیر مقدم کرتے ہیں، سعودی سرمایہ کاروں کو تمام سہولیات فراہم کی جائیں گی۔ وزیرِ خارجہ اسحاق ڈار

جنرل (ر) باجوہ میرے خلاف ہیروئن کے جعلی کیس میں براہِ راست ملوث تھا، رانا ثناء اللّٰہ

میرے خلاف ہیروئن کے جعلی کیس میں جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ براہِ راست ملوث تھا، عمران خان نے پارلیمنٹ کی منظوری کے بغیر اگست میں ہی جنرل (ر) باجوہ کو توسیع دے دی تھی، میاں نواز شریف نے کہا کہ اب محاذ آرائی بےسود ہے۔
Op-Ed⁨کراچی ریڈ زون میں ”سپریم کورٹ آف پولیس“⁩
spot_img

⁨کراچی ریڈ زون میں ”سپریم کورٹ آف پولیس“⁩

Op-Ed
Op-Ed
Want to contribute to The Thursday Times? Get in touch with our submissions team! Email views@thursdaytimes.com
spot_img

ماحول خاصہ گرما گرم تھا۔ درخواست گزاروں کا آنا جانا جاری تھا۔ مائیک آن اور تقریریں،مذمتیں ہو رہی تھیں۔ آنسو بہہ رہی تھیں،دل دھڑک رہی تھیں۔ گہماگہمی کی سما تھیں لیکن یکجہتی کرنے والے حسابی تھے اور ہر رنگ و نسل کے لوگ تھے۔ البتہ مدعی اور مؤقل کا موقف اور مطالبہ ایک ہی تھا۔ چہرے ہزار۔

میڈیا کی آنکھیں ریکارڈ کر رہی تھیں لیکن اسٹریم میں بلیک آؤٹ تھی۔ اس کی وجہ مخالفین کی طاقتِ اقتدار کی منتقلی نہ تھی بلکہ ستّر سالوں سے ہر نمائندہ جسے مخالفین بھی کہہ سکتے ہیں کی وجہ سے تھیں، ان سے مظاہرین انصاف بھی مانگ رہے تھے اور میڈیا انہی کی وجہ سے وہاں موجود چہروں کو گھر کے صحن اور کمرے میں رکھے ٹی وی میں دکھا نہیں پا رہا تھا۔

سبھی وجوہات انتقامی سیاسی چپقلش بھی نہیں تھی۔ ”کل کی آزاد میڈیا کا وزیر کا قملدان دوسرے سیاسی جماعت کا سپرد تھا تو نہیں دکھاتا“ والا سین بھی نہیں تھا۔ پی ٹی آئی فارن فنڈنگ کیس کا فیصلہ بھی نہیں تھا۔ اے ون فلیڈ ریفرنس اور صاحبِ کرسی کا نااہلی کا معمہ بھی چل نہیں رہا تھا۔ سب کچھ الگ تھلگ،لوگ الگ،مطالبات الگ،ان سے سرکاری رویہ الگ،سرکاری میڈیا اور موقف بھی الگ اور ان کا صوبہ بھی الگ۔ بلوچ مظاہرین کی بیٹھک تھی اور سی ٹی ڈی ملاقات کی یقین دہانی پر احتجاج ختم کروا گئی تھی۔ ڈیڈ لائن تمام ہوا لوگ پھر آگئے۔ سی ٹی ڈی کی مذاکراتی ٹیم اپنی الزامات کی دفاع کرنے نہیں آئی۔ پھر بیٹھک سجایا گیا۔

کاؤنٹر ریررازم ڈیپارٹمنٹ بغیر جرم بلوچ طلبا کو آئے روز لاپتہ کرتی ہے۔ الزام لگاتی ہے۔ مزاحمت ہوئی تو رہا وگرنہ سنگین الزامات لگا کر کوٹ کچہری کی تاریخ پہ تاریخ کا مہمان بنا دیتا ہے۔ ادارہ ہے وزارتِ داخلہ کا ماتحت لیکن باخدا لگتا ہے کہ ادارہ داخلہِ سندھ میں جوابدہ نہ ہے اور یا ادارہ کی گن کہیں اور بجتی ہیں۔

البتہ ریڈزون میں دفعہ اکیس سو چوّالیس کا محافظ اگر دفعہ اایک سو چوالیس کی دفاع کرتا ہے تو صرف بلوچ مظاہرین پر۔ چاہے 24 مئی ہو یا 13 جون۔ انکے آگے کوئی نہیں اور پیچھے بھی۔ جب چاہا مارا گھسیٹا،تھانے میں بند کیا۔ پریشر قانونی ہو یا حکومتی نہیں آئی شاید قانون کی رکھوالوں کو سراہا گیا تو پھر حضور لاٹھی اور بندوق کی شست قانون توڑنے والے بلوچ کے خلاف آئی گی۔ بے گناہ کو غائب کرے  گی، شہری کے خلاف کبھی اور ہرگز بھی نہیں آئے گی۔ جنابِ والا مدعا ریڑزون کراچی کا ہے۔ انتہائی عالی شان و نو گو ایریا میں رہنے والے حاکمِ وقت کا ہے۔ دوسری شاہراہ پر آگے سے لفٹ میں شاہراہِ دستور کی محافظ سندھ ہائیکورٹ ہے۔ پھر آگے سے رائٹ آئین کے رکھوالوں کا عارضی رہائش گاہ یا کوارٹر۔ ان سب کے ہوتے ہوئے جب انصاف کا بول بالا نہ ہو۔ تو بن جاتی ہے ”سپریم کورٹ آف پولیس“۔

ان کا طریقہِ انصاف بھی الگ اور قانون کی رکھوالی کا طرز بھی منفرد۔  بے گناہوں کو اٹھانے کی احکامات دے کر بنانا ریپبلک کی یاد دہانی کرواتی ہے تو بے گناہوں پر ڈنڈے،کوڑے برسانے کا ضیا الحق کا مارشل لا یاد کرواتا ہے۔ بے گناہوں کو قید خانے لے جاتے ہوئے ایوب مارشل لاء کو یاد دلاتی ہے۔ 

انفرادی قوت کے چند لوگ اجتماعی مفادات کا پھانڈا پوٹتے ہوئے مارشل لاء کے ادوار میں لے جاتی ہیں جہاں کرسی کے دائیں،بائیں اور آگے پیچھ ایک حکم۔ ایک ہی قانون۔ جج اور وکیل بھی ایک، تھانیدار بھی ایک۔ انفرادی قوت کے چند لوگ اجتماعی مفادات کا پھانڈا پوٹتے ہوئے مارشل لاء کے ادوار میں لے جاتی ہیں جہاں کرسی کے دائیں،بائیں اور آگے پیچھ ایک حکم۔ ایک ہی قانون۔ جج اور وکیل بھی ایک، تھانیدار بھی ایک۔ یہی سین آج کا بھی ہے۔ انتظامی معاملات کا ڈی سی ہو۔ اندرونی معاملات کا محکمہِ داخلہ،تھوڑی اوپر دوسری منزل کا وزیراعلی ہو یا قانون کے داعی ہائیکورٹ۔

کراچی میں یوں لگا، جیسے بھی لگا صحیح لگا۔  کراچی سی ٹی ڈی کے پیچھے سی ٹی ڈی اور آگے سی ٹی ڈی۔ تعارفی کلمات محض یہ کہ قانون کے رکھوالے وحشی نظام کے اندھی قانون کو لگام دینے کی آخری حربہ اسمتعال کرتے ہوئے سارے نظام کو سی ٹی ڈی کے برابر لانے کے لیے ادارہ ہر دم،تازہ دم خوشاں ہے۔


The contributor, Yousuf Baloch, specialises in the discussion of human rights violations worldwide.

Reach out to him @YousufBaluch1.

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments

Read more

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
error: