spot_img

Columns

News

وزیرِ اعلٰی پنجاب مریم نواز شریف نے ’’نواز شریف آئی ٹی سٹی‘‘ کا سنگ بنیاد رکھ دیا

وزیر اعلٰی پنجاب مریم نواز شریف نے پاکستان کے پہلے انفارمیشن ٹیکنالوجی منصوبے ’’نواز شریف آئی ٹی سٹی‘‘ کا افتتاح کر دیا۔ آئی ٹی سٹی کا نام نواز شریف کے نام پر رکھا گیا ہے کیونکہ نواز شریف ہی جدید پاکستان کے بانی ہیں۔

ہماری حکومت کا تختہ نہ الٹایا جاتا تو آج ہم ایشیاء سمیت پوری دنیا میں بہت آگے ہوتے، نواز شریف

ہماری حکومت کا تختہ نہ الٹایا جاتا تو آج ہم ایشیاء سمیت پوری دنیا میں سب سے آگے ہوتے، تین بندوں نے 25 کروڑ عوام کے منتخب وزیراعظم کو بیٹے سے تنخواہ نہ لینے پر نکال دیا، پھر ایک ایسا بندہ لایا گیا جس نے ملک میں تباہی مچا دی۔

نواز شریف کو 28 مئی (یومِ تکبیر) کو پاکستان مسلم لیگ (ن) کا صدر منتخب کیا جائے گا

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی سینٹرل ورکنگ کمیٹی کا اجلاس؛ نواز شریف کو 28 مئی (یومِ تکبیر) کو پاکستان مسلم لیگ (ن) کا صدر منتخب کیا جائے گا، وزیراعظم شہباز شریف 28 مئی تک مسلم لیگ (ن) کے قائم مقام صدر نامزد۔

میں آلو ٹماٹر پیاز کی قیمتیں کم کرنے اور لوگوں کیلئے آسانیاں پیدا کرنے آئی ہوں، وزیرِ اعلٰی مریم نواز شریف

میں آلو ٹماٹر پیاز کی قیمتیں کم کرنے اور لوگوں کیلئے آسانیاں پیدا کرنے آئی ہوں، روٹی پچیس روپے سے سستی ہو کر پندرہ روپے پر آ گئی ہے، آج کل زیادہ وقت صحت اور تعلیم کے شعبوں پر کام کرتے ہوئے گزر رہا ہے۔

وفاقی حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں بڑی کمی کا اعلان کر دیا

پیٹرول کی قیمت میں فی لیٹر 15 روپے 39 پیسے، ہائی سپیڈ ڈیزل کی قیمت میں فی لیٹر 7 روپے 88 پیسے، لائٹ ڈیزل آئل کی قیمت میں 7 روپے 54 پیسے جبکہ کیروسین آئل کی قیمت میں 9 روپے 86 پیسے کمی کا اعلان کر دیا گیا ہے۔
spot_img
Newsroomعمران خان اپنے ارادوں میں کامیاب ہو جاتا تو ہم سب آج...

عمران خان اپنے ارادوں میں کامیاب ہو جاتا تو ہم سب آج قبروں میں ہوتے، رانا ثناء اللّٰہ

اسٹیبلشمنٹ نے پاکستان کو غیر مستحکم کیا، عمران خان اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ مل کر اپوزیشن کو ختم کر دینا چاہتا تھا، مسلم لیگ (ن) کو سادہ اکثریت ملتی تو حکومت نواز شریف کی لیڈرشپ میں بنتی، پاکستان کیلئے نواز شریف، اسٹیبلشمنٹ اور عمران خان کو مل کر بیٹھنا ہو گا۔

spot_img

اسلام آباد (تھرسڈے ٹائمز) — پاکستان مسلم لیگ (ن) پنجاب کے صدر اور سابق وزیرِ داخلہ رانا ثناء اللّٰہ نے کہا ہے کہ اگر عام انتخابات میں مسلم لیگ (ن) کو سادہ اکثریت مل جاتی تو نواز شریف کی قیادت میں حکومت بنتی اور دعویٰ کے ساتھ کہتا ہوں کہ پھر پاکستان دو برس میں تمام مشکلات سے باہر نکل آتا۔

صدر مسلم لیگ (ن) پنجاب رانا ثناء اللّٰہ نے ایک نجی نیوز چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ہے کہ اگر کسی بھی ملک یا معاشرے کی حقیقتیں باہم دست و گریباں رہیں تو پھر اس ملک یا معاشرے میں تباہی آتی ہے، پاکستان میں جاری اس تباہی کے ماحول میں 21 اکتوبر کو ایک لیڈر امید کی کرن بن کر سامنے آیا اور قوم کے سامنے کہا کہ ہمیں سادہ اکثریت دیں۔

سابق وزیرِ داخلہ رانا ثناء اللّٰہ نے کہا کہ عام انتخابات میں مسلم لیگ (ن) کو سادہ اکثریت نہیں مل سکی، میں دعویٰ کے ساتھ کہتا ہوں کہ اگر مسلم لیگ (ن) کا سادہ اکثریت ملتی تو میاں محمد نواز شریف کی لیڈرشپ میں حکومت بنتی اور پاکستان محض دو سالوں میں مشکلات کے بھنور سے باہر نکل آتا۔

راہنما مسلم لیگ (ن) کا کہنا تھا کہ میاں محمد نواز شریف پاکستان میں موجود تمام حقیقتوں کے ساتھ بیٹھنے کو تیار ہیں، انہوں نے مینارِ پاکستان جلسہ میں کہا تھا کہ میرا چالیس سالہ سیاسی زندگی کا یہ نچوڑ ہے کہ پاکستان بحرانوں سے تب نکلے گا جب سب مل کر سر جوڑ کر بیٹھیں گے۔

سابق وزیرِ داخلہ رانا ثناء اللّٰہ نے کہا کہ میاں محمد نواز شریف ایک قومی راہنما ہیں، میاں نواز شریف پاکستان کے سینئر ترین سیاستدان ہیں، پاکستانی سیاست میں میاں نواز شریف کا کردار ہونا چاہیے اور انشاءاللّٰه پاکستان کی سیاست میں میاں نواز شریف کا کردار ہو گا۔

رانا ثناء اللّٰہ کا کہنا تھا کہ عمران خان اسٹیبلشمنٹ کا پراجیکٹ تھا، اسٹیبلشمنٹ نے 2017 اور 2018 میں ہمیں اور پاکستان کو غیر مستحکم کیا، دھاندلی کے ذریعہ عمران خان کو لایا گیا اور ملک پر مسلط کر دیا گیا، پھر عمران خان نے کہا کہ وہ تمام اپوزیشن کو ختم کر دینا چاہتا ہے، اس معاملہ میں اسٹیبلشمنٹ نے عمران خان کا ساتھ نہیں دیا جس کے بعد ہمارے اندر ان کیلئے نرم گوشہ پیدا ہوا۔

ان کا کہنا تھا کہ عمران خان جو نظام لانا چاہتا تھا اگر اس میں کامیاب ہو جاتا تو پھر ہم سب قبروں میں ہوتے، عمران خان اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ مل کر ہمیں ختم کر دینا چاہتا تھا اور اسی لیے ہم نے سابق آرمی چیف جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ کو ایکسٹینشن کیلئے ووٹ دیا تاکہ عمران خان اپنے ارادوں میں کامیاب نہ ہو سکے۔

صدر مسلم لیگ (ن) پنجاب رانا ثناء اللّٰہ نے کہا کہ عمران خان نے جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ کو وزیراعظم کے نوٹ پیڈ پر ایکسٹینشن جاری کر دی، عمران خان کو بتایا گیا تھا کہ پہلے کابینہ کی منظوری درکار ہوتی ہے تو اس نے کابینہ کی منظوری کے بعد پھر سے نوٹیفکیشن جاری کر دیا، پھر عمران خان کو بتایا گیا کہ ایسے نہیں ہو سکتا بلکہ ایکسٹینشن کیلئے صدر کی منظوری بھی درکار ہوتی ہے۔

رانا ثناء اللّٰہ کا مزید کہنا تھا کہ میاں محمد نواز شریف پاکستان کی ایک بہت بڑی حقیقت ہے، اسٹیبلشمنٹ بھی پاکستان کی ایک حقیقت ہے جبکہ عمران خان بھی حقیقت ہے اور جب تک یہ تینوں حقیقتیں مل کر نہیں بیٹھیں گی تب تک بات نہیں بنے گی۔

Read more

میاں نواز شریف! یہ ملک بہت بدل چکا ہے

مسلم لیگ ن کے لوگوں پر جب عتاب ٹوٹا تو وہ ’نیویں نیویں‘ ہو کر مزاحمت کے دور میں مفاہمت کا پرچم گیٹ نمبر 4 کے سامنے لہرانے لگے۔ بہت سوں نے وزارتیں سنبھالیں اور سلیوٹ کرنے ’بڑے گھر‘ پہنچ گئے۔ بہت سے لوگ کارکنوں کو کوٹ لکھپت جیل کے باہر مظاہروں سے چوری چھپے منع کرتے رہے۔ بہت سے لوگ مریم نواز کو لیڈر تسیلم کرنے سے منکر رہے اور نواز شریف کی بیٹی کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے۔

Celebrity sufferings

Reham Khan details her explosive marriage with Imran Khan and the challenges she endured during this difficult time.

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
spot_img
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
error: