spot_img

Columns

Columns

News

عالمی عدالتِ انصاف نے بنجمن نیتن یاہو اور یحییٰ سنوار کے وارنٹ گرفتاری طلب کر لیے

عالمی عدالتِ انصاف (آئی سی سی) نے اسرائیلی وزیراعظم بنجمن نیتن یاہو، اسرائیلی وزیرِ دفاع یوو گیلنٹ اور حماس راہنماؤں یحییٰ سنوار، محمد دیاب المصیری و اسماعیل ہنیہ کے وارنٹ گرفتاری طلب کر لیے۔

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی ہیلی کاپٹر حادثے میں جاں بحق ہو گئے

ایرانی صدر ابراہیم رئیسی کا ہیلی کاپٹر ایرانی علاقہ آذربائیجان میں گر کر تباہ، حادثہ میں ایرانی صدر، وزیرِ خارجہ حسین امیر، مشرقی آذربائجان کے گورنر ملک رحمتی اور صوبہ میں ایرانی صدر کے نمائندے آیت اللہ علی سمیت تمام افراد جاں بحق ہو گئے۔

وزیرِ اعلٰی پنجاب مریم نواز شریف نے ’’نواز شریف آئی ٹی سٹی‘‘ کا سنگ بنیاد رکھ دیا

وزیر اعلٰی پنجاب مریم نواز شریف نے پاکستان کے پہلے انفارمیشن ٹیکنالوجی منصوبے ’’نواز شریف آئی ٹی سٹی‘‘ کا افتتاح کر دیا۔ آئی ٹی سٹی کا نام نواز شریف کے نام پر رکھا گیا ہے کیونکہ نواز شریف ہی جدید پاکستان کے بانی ہیں۔

ہماری حکومت کا تختہ نہ الٹایا جاتا تو آج ہم ایشیاء سمیت پوری دنیا میں بہت آگے ہوتے، نواز شریف

ہماری حکومت کا تختہ نہ الٹایا جاتا تو آج ہم ایشیاء سمیت پوری دنیا میں سب سے آگے ہوتے، تین بندوں نے 25 کروڑ عوام کے منتخب وزیراعظم کو بیٹے سے تنخواہ نہ لینے پر نکال دیا، پھر ایک ایسا بندہ لایا گیا جس نے ملک میں تباہی مچا دی۔

نواز شریف کو 28 مئی (یومِ تکبیر) کو پاکستان مسلم لیگ (ن) کا صدر منتخب کیا جائے گا

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی سینٹرل ورکنگ کمیٹی کا اجلاس؛ نواز شریف کو 28 مئی (یومِ تکبیر) کو پاکستان مسلم لیگ (ن) کا صدر منتخب کیا جائے گا، وزیراعظم شہباز شریف 28 مئی تک مسلم لیگ (ن) کے قائم مقام صدر نامزد۔
Opinionجسٹس کھنہ سے جسٹس فائز عیسیٰ تک
spot_img

جسٹس کھنہ سے جسٹس فائز عیسیٰ تک

Hammad Hassan
Hammad Hassan
Hammad Hassan has been a columnist for over twenty years, and currently writes for Jang.
spot_img

تحریر حماد حسن


بارہ جون انیس سو پچھتر کو ہندوستان کے ایک شہری راج نارائن نے اآلہ آباد ہائی کورٹ میں راج نارائن بنام ریاست اتر پردیش کے نام سے ایک رٹ دائر کردی اور اپنی رٹ میں اندرا گاندھی کی انتخابی جیت پر اعتراض اُٹھایا کہ یہ انتخابی کامیابی دھاندلی کے ذریعے وجود میں آئی ہے اس لئے ماضی قریب میں ہوئے الیکشن کو کالعدم قرار دیا جائے۔

آلہ آباد ہائی کورٹ کے جسٹس جگموھن لال سنہا نے اس کیس کو سنا اور فیصلے میں وزیراعظم اندرا گاندھی کو مجرم ٹھرا کر چھ سال تک اس پر سرکاری عہدہ لینے اور الیکشن لڑنے کی پابندی لگا دی ، اندراگاندھی حکومت نے فورًا اس حکم کے خلاف ایپکس کورٹ میں سٹے لے لیا اور سپریم کورٹ میں اس فیصلے کے خلاف اپیل بھی کردی لیکن کانگرس اور اندراگاندھی دونوں کو در پیش مشکلات کا اندازہ ہو چکا تھا۔

اس لئے چند دن بعد وزیراعظم اندراگاندھی نے آئین کے آرٹیکل 352 کے شق 1 کے تحت ہندوستان کے صدر جمہوریہ فخرالدین علی احمد کے ذریعے ستائیس جون1975 کو پورے ملک میں ایمرجنسی نافذ کردی اور بہانہ یہ بنایا کہ 1971 میں پاکستان کے ساتھ جنگ اور 72 میں قحط کی صورتحال کی وجہ بسے ملکی معیشت خراب ہو چکی ہے اور اسے صحیح سمت پر ڈالنے کے لئےایمرجنسی کا نفاذ اور بنیادی حقوق کی معطلی ضروری ہے لیکن در اصل اس کی آڑ میں مخالف جماعتوں اور اپوزیشن لیڈروں پر کریک ڈاؤن شروع ہوگیا اور بنیادی حقوق کی معطلی کی وجہ سے بغیرکسی ٹرائل کے واجپائی ،مرار جی ڈیسائی جے پرکاش نارائن اور ایل کے ایڈوانی جیسے اہم سیاسی لیڈروں سمیت ہزاروں مخالف سیاسی کارکن جیلوں میں ٹھونس دئیے گئے۔

اندراگاندھی کے اس سیاسی جبر کے خلاف قیدیوں اور انسانی حقوق کی تنظیموں نے بنیادی حقوق کے حصول کے لئے مختلف عدالتوں میں پیٹیشنز دائر کئے جس پر کئی عدالتوں نے قیدیوں کے حق میں فیصلے دینے شروع کئیے تو حکومت نے اس کے خلاف ھائی کورٹ میں اپیل دائر کردی۔

اس کیس کو ایڈیشنل ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ جبل پور بنام شفکان شکلا کے نام سے شہرت ملی۔

اس تاریخی مقدمے کو پانچ ججز نے سننا شروع کیا تو نہ صرف ہندوستان بلکہ عالمی میڈیا کی نگاہیں بھی اس اہم ترین کیس پر جم گئیں کیونکہ بنیادی حقوق کی معطلی اور ایمرجنسی کے نفاذ کی وجہ سے پورا ملک خوف اور دہشت کی لپیٹ میں تھا اور عدالتوں میں بیٹھے منصفوں کے اعصاب بھی جواب دے گئے تھے اس لئے حالات کے نبض شناسوں کو وہی توقع تھی جو ہمارے ہاں ثاقب نثار کے دور میں ثاقب نثاروں سے ہو ا کرتی تھیں۔

اس لئے جب کچھ عرصہ بعد ھندستانی تاریخ کے اس مشہور مقدمےکا فیصلہ آیا تو پانچ میں سے چار ججز ثاقب نثار جیسے ثابت ہوئے اور بنیادی حقوق کی معطلی اور ایمرجنسی کو جائز ٹھہرایا لیکن ایک جج وقار احمد سیٹھ جیسا ثابت ہوا اور طاقت کے سامنے ڈٹ کر ایمرجنسی کے نفاذ کے خلاف انتہائی سخت لیکن دلیر اختلافی فیصلہ لکھا اس جج کا نام جسٹس ھنس راج کھنّہ تھا اس نے اپنے فیصلے میں یہاں تک لکھا کہ ایمرجنسی قانون کانفاذ کرنے والا نہ صرف فاطر ا لعقل بلکہ انسانیت سے بھی عاری ہے کیونکہ یہ حق اسے کون دیتا ہے کہ وہ انسانوں کے بنیادی حقوق کو معطل کرتا پھرے اور اگر وہ ایسا کرے تو وہ ایک حیوان سے بھی بدتر ہے۔

اس فیصلے میں باقی تمام ججز اس کے خلاف تھے اس لئے وہ اپنے ضمیر کی آواز کو قانون تو نہ بنا سکا لیکن اس کے کردار نے مستقبل کے عدالتی تاریخ پر انتہائی مثبت اثرات ڈالے۔ اور پھر وہ دن اور آج کا دن نہ کھبی ایمرجنسی کا قانون لاگو ہوا نہ ہی ریاست آئین کے راستے کی دیوار بنا۔

جسٹس ھنس راج کھنّہ جب تک منصف کی کرسی پر بیٹھے رہے اس وقت تک کوئی جابر اور طاقتور آرام کی نیند نہ سوسکا اس لئے جب وہ چیف جسٹس بننے کے لئے سب سے سینئر جج کی حیثیت سے سامنے آئے تو غیر متوقع طور پر اچانک اس سے جونیئر جج جسٹس ایم ایچ بیگ کو اس پر فوقیت دے کر چیف جسٹس بنا دیا گیا تو صرف پندرہ منٹ بعد اس انتہائی اصول پسند جج جسٹس ھنس راج کھنہ نے اپنا استعفٰی اپنے ٹیبل پر چھوڑا اور خاموشی کے ساتھ گھر چلے گئے۔

وکلاء کو خبر ہوئی تو اسی دن پورے ہندوستان میں بار کونسلز نے سخت احتجاج شروع کیا لیکن ریاست کسی طور دوبارہ جسٹس کھنہ کا سامنا کرنے کو تیار نہ تھی تاہم اس احتجاج نے اس عظیم جج کو ایک دیوتائی عقیدت فراہم کردی۔

اس لئے جب سپریم کورٹ بارایسوسی ایشن نے 1978 میں جسٹس ھنس راج کھنہ کا مجسمہ نصب کرنے کے لئے دس ھزار روپے چندے کی اپیل کی تو صرف بیس منٹ میں اس سے کئی گنا زیادہ رقم جمع ہوئی یہاں تک کہ بار ایسوسی ایشن کے صدر کو چندہ روکنے کی اپیل کرنا پڑی۔

انہی دنوں نیو یارک ٹائمز نے لکھا کہ ھندوستان جب اپنے ہیروز کو خراج تحسین پیش کرنے کا سلیقہ سیکھ لے گا تو ہر گلی میں جسٹس ھنس راج کھنہ کا مجسمہ نظر آئے گا۔

مشہور لکھاری نانے پھلکے والا نے اپنی کتاب “سیلوٹ ٹو کھنہ“ میں لکھا کہ جہاں خوف مکمل طور پر مفقود ہو اور انصاف کی فراوانی ہو تو سمجھ لیں کہ جسٹس ھنس راج کھنہ کہیں آس پاس ہیں۔

ریاست کی سرکش طاقت پر ہمیشہ ہاتھ ڈالنے اور اسے اپنا دشمن بنانے والے جسٹس کھنہ کے سامنے آخر کار وہی ریاست بھی جھکی اور 1999 میں اسے پدما بھوشن ایوارڈ سے نوازا۔

کہنے کا مطلب یہ ہے کہ طاقت کے سامنے ڈرنے اور جھکنے سے ایک جج اگر ارشاد حسن خان اور ثاقب نثار جیسا بہروپیا بن کر اپنی آئندہ نسلوں کے لئے ایک طعنہ بن سکتا ہے تو حق و انصاف کے لئے ڈٹ کر جسٹس کک جسٹس اے آر کار نیلئس جسٹس ھنس راج کھنہ حتی کہ جسٹس وقار احمد سیٹھ جیسے تاریخ کا قابل فخر حوالہ بھی بن سکتے ہیں۔

اس تابندہ تاریخ اور شاندار روایت کو لے کر آج کل جسٹس فائز عیسی نے اس وادی پرخار کا رخ کیا جس سمت قدم اُٹھانے کے لئے بھی ایک جگرا چاہئیے تبھی تو اپنے ایک فیصلے کے ذریعے انھوں نے فارسی مقولے کے مصداق آسمانوں کے اس گنبد تلے ایک غلغلہ برپا کر دیا کیونکہ یہ یہی جسٹس فائز عیسی ھی تھے جنہوں نے اس وقت جبر کے گریبان پر ھاتھ ڈالا جب دوسرے جبر کے پاوں پر جھکے نظر آئے
تاریخ ایک استعجاب کے ساتھ بولتی رہے گی کہ ایک ہی منظر نامہ اور ایک ہی زمانہ تھا لیکن ایک طرف جسٹس فائز عیسی فیض آباد دھرنا کیس کا دلیر اور سربلند فیصلہ دے رہا تھا جبکہ دوسری طرف ثاقب نثار اور اس کے “ہمنوا” پانامہ کیس کی غلاظت ایوان عدل کی تاریخ اور اپنے کردار پر انڈیل رہے تھے۔

اور یہی وہ اصل تفریق ھے جو ایک جج کو قابل احترام اور بلند مقام بھی عطا کر دیتا ھے اور اسے ایک دلال اور بہروپئے کے روپ میں تاریخ کے سامنے بھی پھینک دیتا ہے۔

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments

Read more

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
error: