spot_img

Columns

News

پاک فوج نے جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف انکوائری کا آغاز کر دیا

پاک فوج نے سابق ڈائریکٹر جنرل آئی ایس آئی جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف نجی ہاوسنگ سوسائٹی کے مالک کی درخواست پر انکوائری کا آغاز کر دیا ہے، جنرل (ر) فیض حمید پر الزام ہے کہ انہوں نے نجی ہاؤسنگ سوسائٹی کے خلاف دورانِ ملازمت اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال کیا تھا۔

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، شیر افضل مروت

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، سعودی عرب اور امریکہ دو ممالک تھے جن کے تعاون سے رجیم چینج آپریشن مکمل ہوا، سعودی عرب کی جانب سے پاکستان کیلئے معاشی تعاون بھی اسی پلاننگ کا حصہ ہے۔راہنما تحریکِ انصاف شیر افضل مروت

فیض آباد دھرنا کمیشن ایک مذاق تھا، اس کمیشن کی کوئی وقعت نہیں ہے۔ وزیرِ دفاع خواجہ آصف

جنرل (ر) باجوہ نے مجھے دھمکی دی ہے کہ میں نے باتیں بیان کیں تو ٹانگوں پر کھڑا نہ ہو سکوں گا، جنرل (ر) باجوہ اور جنرل (ر) فیض حمید فیض آباد دھرنا کمیشن میں پیش نہیں ہوئے، فیض آباد دھرنا کمیشن ایک مذاق تھا، اس کمیشن کی کوئی وقعت نہیں ہے۔

سعودی عرب پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا، سعودی وزیرِ خارجہ شہزادہ فیصل

سعودی عرب پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا، جلد سرمایہ کاری میں پیش رفت ہو گی۔ سعودی وزیرِ خارجہسعودی عرب کی جانب سے بڑی سرمایہ کاری کا خیر مقدم کرتے ہیں، سعودی سرمایہ کاروں کو تمام سہولیات فراہم کی جائیں گی۔ وزیرِ خارجہ اسحاق ڈار

جنرل (ر) باجوہ میرے خلاف ہیروئن کے جعلی کیس میں براہِ راست ملوث تھا، رانا ثناء اللّٰہ

میرے خلاف ہیروئن کے جعلی کیس میں جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ براہِ راست ملوث تھا، عمران خان نے پارلیمنٹ کی منظوری کے بغیر اگست میں ہی جنرل (ر) باجوہ کو توسیع دے دی تھی، میاں نواز شریف نے کہا کہ اب محاذ آرائی بےسود ہے۔
spot_img
Newsroomسانحہ 9 مئی کو نہ بھلایا جائے گا نہ ہی اس میں...

سانحہ 9 مئی کو نہ بھلایا جائے گا نہ ہی اس میں ملوث افراد اور منصوبہ سازوں کو معاف کیا جائے گا، ڈی جی آئی ایس پی آر

سانحہ 9 مئی سے جڑے عناصر کو آئینِ پاکستان کے تحت سزائیں دی جائیں گی، اس سانحہ کے منصوبہ سازوں اور سہولت کاروں کو بےنقاب کرنا اور کیفرِ کردار تک پہنچانا ضروری ہے۔

spot_img

راولپنڈی—ڈائریکٹر جنرل آئی ایس پی آر میجر جنرل احمد شریف نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا کہ سانحہ 9 مئی کو بھلایا جائے گا نہ ہی ملوث افراد اور منصوبہ سازوں کو معاف کیا جائے گا، اب تک کی تحقیقات میں بہت سے شواہد مل چکے ہیں اور مل رہے ہیں، تحقیقات سے ثابت ہوا ہے کہ سانحہ 9 مئی کی منصوبہ بندی کئی ماہ سے جاری تھی، افواجِ پاکستان پرعزم ہیں کہ عوام کے تعاون سے ہر چیلنج پر قابو پا لیں گے۔

میجر جنرل احمد شریف نے کہا کہ ملٹری ایکٹ کے تحت 102 ملزمان کا ٹرائل ملٹری کورٹس میں جاری ہے، سانحہ 9 مئی سے جڑے عناصر کو آئینِ پاکستان کے تحت سزائیں دی جائیں گی، اس سانحہ کے منصوبہ سازوں اور سہولت کاروں کو بےنقاب کرنا اور کیفرِ کردار تک پہنچانا ضروری ہے، سانحہ 9 مئی اس وقت تک انصاف کا منتظر رہے گا جب تک منصوبہ سازوں کو کیفرِ کردار تک نہیں پہنچایا جائے گا، آج کارروائی نہ ہوئی تو کل کوئی اور سیاسی گروہ مذموم مقاصد کیلئے فوج کو نشانہ بنائے گا۔

ڈی جی آئی ایس پی آر کا کہنا تھا کہ افواجِ پاکستان تمام اکائیوں، تمام مکاتبِ فکر اور طبقات کی نمائندگی کرتی ہے، عوام کو کسی صورت بھی اپنی افواج سے جدا نہیں کیا جا سکتا اور اس کی گواہی شہداء کی قبریں بھی دیتی ہیں، افواجِ پاکستان آئے روز عظیم شہداء کے جنازے اٹھا رہے ہیں۔

فوج کے شعبہ تعلقاتِ عامہ کے سربراہ نے کہا کہ آج شہداء کے ورثاء ہم سے اور بالخصوص آرمی چیف سے کڑے سوالات کر رہے ہیں، وہ پوچھتے ہیں کہ کیا ان کے پیاروں نے قوم کیلئے جانیں اس لیے دی تھیں؟ ملوث افراد کب قانون کے کٹہرے میں لائے جائیں گے اور کیا مذموم مقاصد کیلئے شرپسند عناصر شہداء کی قربانیوں کو سیاسی بھینٹ چڑھا دیں گے؟

میجر جنرل احمد شریف کا کہنا تھا کہ سانحہ 9 مئی کے ماسٹر مائنڈز وہی ہیں جنہوں نے طویل عرصہ تک فوج کے خلاف ذہن سازی کی، توقع نہیں تھی کہ ایک سیاسی جماعت اپنے لوگوں کو اپنے ہی ملک کی فوج پر حملوں کیلئے اکسائے گی، فوج کے ردعمل سے یہ اپنے مذموم مقاصد کو آگے لے کر جانا چاہتے تھے، 9 مئی کے واقعات اچانک نہیں ہوئے بلکہ ان کے پیچھے ایک منصوبہ بندی اور سوچ تھی، خواتین کو بھی منصوبہ کے تحت ڈھال بنا کر آگے رکھا گیا، ان کا مقصد فوجی تنصیبات پر حملے کر کے فوج سے ردعمل لینا تھا، جس طرح کا ردعمل وہ چاہتے تھے اگر وہ دیا جاتا تو ان کی سازش کامیاب ہو جاتی مگر فوج نے فوری ردعمل نہ دے کر سازش کو ناکام بنایا، فوج نے ایک میچور رسپانس دیا۔

ڈائریکٹر جنرل آئی ایس پی آر نے بتایا کہ فوج نے اپنے خود احتسابی کے عمل کو مکمل کر لیا ہے، جو افسران جی ایچ کیو، جناح ہاؤس اور فوجی تنصیبات کی حفاظت میں ناکام رہے ان کے خلاف کارروائی ہوئی ہے، فوجی افسران کو غیر ارادی غلطیوں پر سزائیں دی گئی ہیں، لیفٹیننٹ جنرل کے عہدے کے افسر سمیت 3 افسران کو نوکری سے فارغ کر دیا گیا ہے، 3 میجر جنرلز اور 7 بریگیڈیئرز سمیت 15 افسران کے خلاف سخت تادیبی کارروائی کی گئی ہے، ایک ریٹائرڈ فور سٹار کی نواسی اور ایک ریٹائرڈ فور سٹار افسر کا داماد بھی گرفت میں ہیں، ایک ریٹائرڈ تھری سٹار کی اہلیہ احتسابی عمل سے گزر رہی ہیں جبکہ ایک ریٹائرڈ ٹو سٹار جنرل کی اہلیہ اور داماد بھی احتسابی عمل سے گزر رہے ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ سانحہ 9 مئی کا الزام فوج پر لگانے سے زیادہ شرمناک بات کوئی نہیں ہے، چند گھنٹوں میں دو سو سے زائد مقامات پر فوجی تنصیبات پر حملے کروائے گئے، سوال کرتا ہوں کہ کیا فوج نے اپنے ایجنٹس پہلے سے بٹھائے ہوئے تھے؟ کیا ہم نے اپنے فوجیوں سے اپنے شہداء کی یادگاروں کو جلایا؟ قلعہ بالا حصار میں اسلحہ کا مظاہرہ کس نے کیا؟ جب یہ سلسلہ چل رہا تھا تو نامی و بےنامی اکاؤنٹس سے کون پرچار کر رہا تھا کہ مزید جلاؤ اور قبضہ کرو؟ منصوبہ بندی کے تحت شہداء کی یادگاروں کو چن چن کر نشانہ بنایا گیا، فوج کے خلاف سوشل میڈیا کو بھی استعمال کیا گیا، سوشل میڈیا پر پراپیگنڈا پاکستان کیلئے وباء کی صورت اختیار کر چکا ہے، بدقسمتی سے جھوٹ، تفریق اور پراپیگنڈا کے علاوہ ایک خاص سیاسی گروہ اور اس کی قیادت کے پاس کوئی اور ہتھیار باقی نہیں رہا۔

انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے متعلق ایک سوال کے جواب میں میجر جنرل احمد شریف نے کہا کہ ایسا بےبنیاد بیانیہ بنانے کیلئے پرانی ویڈیوز اور تصاویر پھیلائی گئیں، انسانی حقوق کے واویلے کے پیچھے 9 مئی کے منصوبہ ساز ہیں، زیادہ تر دیکھا گیا ہے کہ دہشتگرد تنظیمیں ایسے بیانیہ کے پیچھے چھپتی ہیں، انسانی حقوق کی پامالی کے بیانیہ کو اس طرح چلایا جاتا ہے کہ سوشل میڈیا پر فیک نیوز اور پرانی ویڈیوز اور تصاویر کو جوڑ کر غلط خبریں پھیلائی جاتی ہیں تاکہ تاثر پھیلے کہ ریاست جبر کر رہی ہے اور پوشیدہ روابط کی بنیاد پر اور پیسوں کے استعمال سے بیرون ملک لوگوں سے انسانی حقوق کی پامالی کے متعلق بیانات بھی دلوائے جاتے ہیں جبکہ ان دونوں چیزیں کو ملا کر ایسا کیس بنایا جاتا ہے کہ پاکستان میں انسانی حقوق کی پامالی ہو رہی ہے اس لیے پاکستان کی تجارتی اور معاشی معاونت بند کر دی جائے تاکہ پاکستان میں افراتفری پھیلے اور معاشی حالات خراب ہوں، بےچینی پھیلے اور یوں ان کے مذموم سیاسی مقاصد کا راستہ نکل سکے، پاکستان کو سب سے زیادہ خطرہ اندرونی انتشار سے ہے۔

ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ آئی ایس پی آر نے 15 مئی کو پیغام دیا تھا کہ تمام پولیٹیکل سٹیک ہولڈرز ساتھ بیٹھ کر اتفاق رائے پیدا کریں، قومی اتفاقِ رائے پیدا ہو تاکہ جمہوری اقدار مضبوط ہوں، عوام کے اندر اعتماد پیدا ہو اور استحکام آئے، 9 مئی کے واقعات کے بعد عوام پہچان چکے ہیں کہ کیا سچ ہے اور کیا جھوٹ ہے، فوج کیلئے تمام حقیقی سیاسی جماعتیں قابلِ احترام ہیں۔

Read more

میاں نواز شریف! یہ ملک بہت بدل چکا ہے

مسلم لیگ ن کے لوگوں پر جب عتاب ٹوٹا تو وہ ’نیویں نیویں‘ ہو کر مزاحمت کے دور میں مفاہمت کا پرچم گیٹ نمبر 4 کے سامنے لہرانے لگے۔ بہت سوں نے وزارتیں سنبھالیں اور سلیوٹ کرنے ’بڑے گھر‘ پہنچ گئے۔ بہت سے لوگ کارکنوں کو کوٹ لکھپت جیل کے باہر مظاہروں سے چوری چھپے منع کرتے رہے۔ بہت سے لوگ مریم نواز کو لیڈر تسیلم کرنے سے منکر رہے اور نواز شریف کی بیٹی کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے۔

Celebrity sufferings

Reham Khan details her explosive marriage with Imran Khan and the challenges she endured during this difficult time.

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
spot_img
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
error: