spot_img

Columns

News

اقوام متحدہ رپورٹ؛ تحریک طالبان پاکستان سب سے بڑا دہشت گرد گروپ قرار

اقوام متحدہ نے تحریک طالبان پاکستان (ٹی ٹی پی) کو سب سے بڑا دہشت گرد گروپ قرار دے دیا۔ کالعدم ٹی ٹی پی پاکستان کے اندر شہریوں اور سیکیورٹی فورسز کیخلاف دہشت گردی کی کارروائیوں کے لیے افغان سرزمین کو مسلسل استعمال کر رہی ہے۔

شہباز شریف ہمارے ایم این ایز کو اغواء کرنے کیلئے انٹیلیجنس ایجنسیز کا استعمال کر رہے ہیں، عمر ایوب

شہباز شریف ہمارے ایم این ایز کو اغواء کرنے کیلئے آئی ایس آئی، ایم آئی اور آئی بی کو استعمال کر رہے ہیں، آج ہمارے ایم این اے امیر سلطان کو اغواء کیا گیا ہے، انٹیلیجنس ایجنسیز کے سربراہوں کو چاہیے کہ وہ سیاسی معاملات میں مداخلت سے باز رہیں۔

Pakistan seals US$7bn deal with IMF to transform and stabilise economy once and for all

Building on the 2023 Stand-by Arrangement, IMF staff and Pakistani authorities have reached a staff-level agreement on a 37-month Extended Fund Facility of about US$7 billion, aiming to cement macroeconomic stability, strengthen fiscal and monetary policy, broaden the tax base, improve SOE management, enhance competition, secure investment, enhance human capital, and expand social protection.

عمران خان اور بشریٰ بی بی کو توشہ خانہ ریفرنس میں گرفتار کر لیا گیا

نیب نے سابق وزیراعظم عمران خان اور ان کی اہلیہ بشریٰ بی بی کی نئے توشہ خانہ ریفرنس میں گرفتاری ڈال دی، ڈپٹی ڈائریکٹر نیب محسن ہارون کی سربراہی میں نیب ٹیم نے دونوں ملزمان کو گرفتار کر لیا۔

جو سائل ہی نہیں تھا سپریم کورٹ نے اسکی دہلیز پر ہوم ڈیلیوری کرکے فیصلہ پہنچایا، خواجہ آصف

سپریم کورٹ نے آئین کو از سر نو تحریر کیا اور فیصلے کی ہوم ڈلیوری کی۔ یہ ہوم ڈلیوری اس فریق کو کی گئی ہے جو کیس میں فریق ہی نہیں تھا۔ آئین کو دوبارہ لکھنے، بدلنے اور ترمیم کرنے کا حق صرف پارلیمنٹ کے پاس ہے۔
spot_img
Newsroomجنرل باجوہ اور جنرل فیض نے تحریکِ عدم اعتماد لانے کیلئے کہا...

جنرل باجوہ اور جنرل فیض نے تحریکِ عدم اعتماد لانے کیلئے کہا تھا، مولانا فضل الرحمٰن

جنرل باجوہ اور جنرل فیض نے تحریکِ عدم اعتماد لانے کیلئے کہا تھا، یہ تحریک پیپلز پارٹی نے چلائی تھی لیکن میں اس کے حق میں نہ تھا، تحریکِ انصاف کو فائدہ پہنچانے کیلئے ہمارے ساتھ دھاندلی کی گئی، اب فیصلے میدان میں ہوں گے۔

spot_img

اسلام آباد (تھرسڈے ٹائمز) — جمعیت علمائے اسلام کے سربراہ مولانا فضل الرحمٰن نے نجی نیوز چینل کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا ہے کہ ہم انتخابات کے نتائج کو مسترد کرتے ہیں، ہم سڑکوں پر احتجاجی تحریک چلائیں گے، اب فیصلے ایوان میں نہیں بلکہ میدان میں ہوں گے، تحریکِ انصاف کو فائدہ پہنچانے کیلئے ہمارے ساتھ دھاندلی کی گئی ہے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے کہا ہے کہ 8 فروری 2024 کے انتخابات چوری ہوئے ہیں اور کسی سے کچھ بھی پوشیدہ نہیں ہے، تحریکِ انصاف کو فائدہ پہنچانے کیلئے ہمارے ساتھ دھاندلی کی گئی ہے، ہم انتخابات میں دھاندلی کے خلاف سڑکوں پر احتجاج کریں گے، الیکشن 2018 میں بھی دھاندلی ہوئی تھی اور اب بھی دھاندلی ہوئی ہے، الیکشن میں دھاندلی کا فائدہ وہی اٹھاتا ہے جو اقتدار میں آتا ہے۔

قائدِ جمعیت کا کہنا تھا کہ انتخابات میں دھاندلی کا فائدہ بظاہر مسلم لیگ (ن) کو ہوا ہے، میاں نواز شریف نے لاہور سے جو نشست جیتی ہے اس کے بارے میں بھی کہا جا رہا ہے کہ وہ نشست انہیں دی گئی ہے اور ممکن ہے کہ اسی وجہ سے میاں نواز شریف نے خود حکومت کا حصہ بننے سے انکار کر دیا ہے اور اس کام کیلئے شہباز شریف کو نامزد کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں تحریکِ عدم اعتماد کے حق میں نہیں تھا، عدم اعتماد کی تحریک پیپلز پارٹی چلا رہی تھی، جب سب کچھ ہو رہا تھا تو میں نے بھی قبول کیا کیونکہ اگر میں انکار کرتا تو سب کہتے کہ فضل الرحمٰن نے عمران خان کو بچایا ہے، جنرل (ر) قمر باجوہ اور جنرل (ر) فیض حمید نے تمام سیاسی جماعتوں کو بلا کر کہا تھا کہ آپ تحریکِ عدم اعتماد لائیں۔

مولانا فضل الرحمٰن کا کہنا تھا کہ جنرل (ر) قمر باجوہ اور جنرل (ر) فیض حمید ہمارے ساتھ رابطے میں تھے، میرے پاس جنرل (ر) فیض حمید خود آئے اور کہا کہ آپ سسٹم میں رہ کر جو کرنا چاہیں ہمیں اس پر کوئی اعتراض نہیں ہو گا لیکن آؤٹ آف سسٹم کچھ نہیں کیجیے گا، میں نے جنرل (ر) فیض حمید کی اس بات کو مسترد کر دیا تھا۔

مولانا فضل الرحمٰن نے قائدِ مسلم لیگ (ن) میاں نواز شریف کے بارے میں بات کرتے ہوئے کہا کہ میں نواز شریف کا بہت زیادہ احترام کرتا ہوں اور آئندہ بھی کرتا رہوں گا، نواز شریف پاکستانی سیاست کا حصہ ہیں، نواز شریف کو ملکی سیاست میں بھرپور کردار ادا کرنا چاہیے، میں نواز شریف کی اصولی سیاست سے اختلاف نہیں رکھتا اور اسی لیے میں نے صرف مسلم لیگ (ن) جو دعوت دی ہے کہ آئیں میرے ساتھ اپوزیشن میں بیٹھیں۔

تحریکِ انصاف سے متعلق بات کرتے ہوئے قائدِ جمعیت کا کہنا تھا کہ میرا عمران خان سے کسی بھی قسم کا کوئی رابطہ نہیں ہے، تحریکِ انصاف کے ساتھ جسموں کا نہیں بلکہ دماغ اور سوچ کا فرق ہے اور یہ فرق ختم بھی ہو سکتا ہے، یہ فرق ختم ہو سکتا ہے یا نہیں اور اگر ہو گا تو کیسے ہو گا کے بارے میں ابھی کچھ نہیں جانتا اور نہ کچھ کہہ سکتا ہوں۔

وزارتِ عظمٰی کیلئے ووٹنگ سے متعلق سوال کے جواب میں مولانا فضل الرحمٰن کا کہنا تھا کہ اگر ہم کسی کو وزیراعظم کیلئے ووٹ دیتے تو مسلم لیگ (ن) کو دیتے لیکن اب ہم نے فیصلہ کیا ہے کہ کسی کو بھی ووٹ نہیں دیں گے، اگر اسٹیبلشمنٹ سمجھتی ہے کہ انتخابات صاف اور شفاف ہوئے ہیں تو پھر 9 مئی کا بیانیہ دفن ہو گیا ہے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ 8 فروری کے انتخابات کے نتیجہ میں جو پارلیمنٹ وجود میں آ رہی ہے اس کی کوئی حیثیت نہیں ہو گی، اس پارلیمنٹ میں فیصلے کوئی اور کرے گا اور پالیسیز بھی کہیں اور سے آئیں گی، یہ پارلیمنٹ تحریکِ انصاف کے دورِ حکومت والی پارلیمنٹ سے زیادہ ہائبرڈ ہو گی، یہ پارلیمنٹ ہائبرڈ پلس ہو گی، سب لوگ صرف مراعات کیلئے وہاں بیٹھے ہوں گے۔

پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ کے بارے میں ایک سوال کے جواب میں ان کا کہنا تھا کہ میرے علم میں ایسا کچھ نہیں ہے کہ شہباز شریف کسی وقت استعفیٰ دینے کیلئے تیار تھے اور ان کی تقریر بھی تیار تھی، ہو سکتا ہے کہ ایسا ہوا ہو لیکن میرے نوٹس میں ایسا کچھ نہیں ہے، اگر ایسا کچھ ہوتا تو وہ ضرور اجلاس بلاتے لیکن ہو سکتا ہے کہ یہ بات اتنی ہائی لائٹ نہ کی گئی ہے۔

مولانا فضل الرحمٰن نے کہا کہ 2018 میں تحریکِ انصاف کی حکومت اسٹیبلشمنٹ نے بنائی تھی اور پھر 2022 میں تحریکِ انصاف حکومت گرانے میں بھی اسٹیبلشمنٹ نے کردار ادا کیا تھا، اسٹیبلشمنٹ کے ساتھ روابط کے حوالہ سے اس حمام میں سب ننگے ہیں، وہ ہمارے ملک کا حصہ ہیں اور ان سے بات کرنے میں کوئی حرج نہیں لیکن ان کے ساتھ سودے بازی کی بات نہیں ہونی چاہیے، کوئی تو ہو جو اسٹیبلشمنٹ کے سامنے کھڑے ہو کر کہے کہ آپ غلط کر رہے ہیں۔

Read more

میاں نواز شریف! یہ ملک بہت بدل چکا ہے

مسلم لیگ ن کے لوگوں پر جب عتاب ٹوٹا تو وہ ’نیویں نیویں‘ ہو کر مزاحمت کے دور میں مفاہمت کا پرچم گیٹ نمبر 4 کے سامنے لہرانے لگے۔ بہت سوں نے وزارتیں سنبھالیں اور سلیوٹ کرنے ’بڑے گھر‘ پہنچ گئے۔ بہت سے لوگ کارکنوں کو کوٹ لکھپت جیل کے باہر مظاہروں سے چوری چھپے منع کرتے رہے۔ بہت سے لوگ مریم نواز کو لیڈر تسیلم کرنے سے منکر رہے اور نواز شریف کی بیٹی کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے۔

Celebrity sufferings

Reham Khan details her explosive marriage with Imran Khan and the challenges she endured during this difficult time.

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
spot_img
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
error: