spot_img

Columns

News

وزیرِ اعلٰی پنجاب مریم نواز شریف نے ’’نواز شریف آئی ٹی سٹی‘‘ کا سنگ بنیاد رکھ دیا

وزیر اعلٰی پنجاب مریم نواز شریف نے پاکستان کے پہلے انفارمیشن ٹیکنالوجی منصوبے ’’نواز شریف آئی ٹی سٹی‘‘ کا افتتاح کر دیا۔ آئی ٹی سٹی کا نام نواز شریف کے نام پر رکھا گیا ہے کیونکہ نواز شریف ہی جدید پاکستان کے بانی ہیں۔

ہماری حکومت کا تختہ نہ الٹایا جاتا تو آج ہم ایشیاء سمیت پوری دنیا میں بہت آگے ہوتے، نواز شریف

ہماری حکومت کا تختہ نہ الٹایا جاتا تو آج ہم ایشیاء سمیت پوری دنیا میں سب سے آگے ہوتے، تین بندوں نے 25 کروڑ عوام کے منتخب وزیراعظم کو بیٹے سے تنخواہ نہ لینے پر نکال دیا، پھر ایک ایسا بندہ لایا گیا جس نے ملک میں تباہی مچا دی۔

نواز شریف کو 28 مئی (یومِ تکبیر) کو پاکستان مسلم لیگ (ن) کا صدر منتخب کیا جائے گا

پاکستان مسلم لیگ (ن) کی سینٹرل ورکنگ کمیٹی کا اجلاس؛ نواز شریف کو 28 مئی (یومِ تکبیر) کو پاکستان مسلم لیگ (ن) کا صدر منتخب کیا جائے گا، وزیراعظم شہباز شریف 28 مئی تک مسلم لیگ (ن) کے قائم مقام صدر نامزد۔

میں آلو ٹماٹر پیاز کی قیمتیں کم کرنے اور لوگوں کیلئے آسانیاں پیدا کرنے آئی ہوں، وزیرِ اعلٰی مریم نواز شریف

میں آلو ٹماٹر پیاز کی قیمتیں کم کرنے اور لوگوں کیلئے آسانیاں پیدا کرنے آئی ہوں، روٹی پچیس روپے سے سستی ہو کر پندرہ روپے پر آ گئی ہے، آج کل زیادہ وقت صحت اور تعلیم کے شعبوں پر کام کرتے ہوئے گزر رہا ہے۔

وفاقی حکومت نے پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں بڑی کمی کا اعلان کر دیا

پیٹرول کی قیمت میں فی لیٹر 15 روپے 39 پیسے، ہائی سپیڈ ڈیزل کی قیمت میں فی لیٹر 7 روپے 88 پیسے، لائٹ ڈیزل آئل کی قیمت میں 7 روپے 54 پیسے جبکہ کیروسین آئل کی قیمت میں 9 روپے 86 پیسے کمی کا اعلان کر دیا گیا ہے۔
spot_img
NewsroomInternationalآئرلینڈ بہت جلد فلسطین کو تسلیم کرنے جا رہا ہے، آئرش وزیرِ...

آئرلینڈ بہت جلد فلسطین کو تسلیم کرنے جا رہا ہے، آئرش وزیرِ خارجہ و ڈپٹی وزیراعظم میخال مارٹن

آئرلینڈ بہت جلد فلسطین کو باضابطہ طور پر ایک ریاست تسلیم کرنے جا رہا ہے، غزہ کے لوگوں پر جاری بمباری کی بھرپور مذمت کرتا ہوں، اس میں کوئی شک نہیں کہ جنگی جرائم کا ارتکاب کیا گیا ہے، کوئی شک نہیں کہ فلسطین کو بطور ریاست تسلیم کیا جائے گا۔

spot_img

ڈبلن (تھرسڈے ٹائمز) — آئرلینڈ کے ڈپٹی وزیراعظم اور وزیرِ خارجہ میخال مارٹن نے آئرش پارلیمنٹ سے خطاب کرتے ہوئے کہا ہے کہ آئرلینڈ بہت جلد فلسطین کو باضابطہ ایک ریاست کے طور پر تسلیم کرنے جا رہا ہے۔

سائمن ہیرس کے بطور سولہویں آئرش وزیراعظم منتخب ہونے کے بعد کابینہ کی تقرری سے متعلق بحث کے دوران منگل کے روز پارلیمنٹ سے خطاب کرتے ہوئے میخال مارٹن نے کہا کہ اب فلسطین کو بطور ریاست تسلیم کرنے میں تاخیر کا کوئی جواز باقی نہیں رہا۔

آئرلینڈ کے ڈپٹی وزیراعظم، وزیرِ خارجہ اور وزیرِ دفاع میخال مارٹن نے بتایا کہ وہ غزہ میں امن کے قیام سے متعلق اقدامات کرنے والے ممالک کے ساتھ فلسطین کو تسلیم کرنے کے حوالہ سے بات چیت کر رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ میرا ارادہ ہے کہ جب یہ وسیع تر بین الاقوامی بات چیت مکمل ہو جائے گی تو حکومت فلسطین کو تسلیم کرنے کے بارے میں ایک باضابطہ تجویز پیش کرے گی تاہم اس میں کوئی شک نہیں کہ فلسطین کو بطور ریاست تسلیم کیا جائے گا۔

آئرلینڈ اور کچھ دیگر یورپین ریاستیں آئندہ ہفتوں میں متوقع امن معاہدہ طے پا جانے کے بعد فلسطین کو باضابطہ طور پر ریاست تسلیم کرنے کا اعلان کریں گی، اس حوالہ سے میخال مارٹن کا کہنا ہے کہ گزشتہ چند مہینوں سے دیگر ممالک کے وزرائے خارجہ کے ساتھ بات چیت جاری ہے کہ کس طرح مشترکہ طور پر فلسطین کو بطور ریاست تسلیم کر کے غزہ اور مغربی کنارے کے لوگوں کی مدد کی جا سکتی ہے اور کیسے عرب قیادت میں امن کے اقدامات کو آگے بڑھانے میں معنی خیز کردار ادا کیا جا سکتا ہے۔

میخال مارٹن نے کہا کہ ہم نے اتفاق کیا ہے کہ اوسلو معاہدے کو کمزور کرنے اور اس وجہ سے دو ریاستوں کی تشکیل کا معاہدہ ایک ایسے مقام پر پہنچ گیا ہے جہاں حتمی معاہدے کی تشکیل کے بعد اوسلو معاہدے کو تسلیم کرنے کا طریقہ اب قابلِ اعتبار یا قابلِ عمل نہیں رہا، میں نے اس حوالہ سے خطہ کے ان لوگوں سے بات چیت کی ہے جو قیامِ امن کیلئے اقدامات کر رہے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ اس میں کوئی شک نہیں کہ جنگی جرائم کا ارتکاب کیا گیا ہے اور میں غزہ کے لوگوں پر جاری بمباری کی بھرپور انداز میں مذمت کرتا ہوں، سفارتی سطح پر براہِ راست محنت سے بین الاقوامی اتحاد کے قیام سے متعلق ہمارا نقطہ نظر فلسطینیوں کیلئے کہیں زیادہ کارگر ثابت ہو گا۔

فلسطین کو باضابطہ طور پر ریاست تسلیم کرنے کا معاملہ آئرش حکومت میں طویل عرصہ سے زیرِ بحث رہا ہے جبکہ اس حوالہ سے یکے بعد دیگرے وزراء نے مشورہ دیا کہ آئرلینڈ کو اصولی طور پر کوئی اعتراض نہیں ہے تاہم آئرلینڈ فلسطینی ریاست کو اُس وقت تسلیم کرے گا جب وہ مشرقِ وسطیٰ میں قیامِ امن کیلئے کردار ادا کر سکے گا جبکہ غزہ میں حالیہ جنگ نے آئرلینڈ میں اس مسئلہ کو ایک نئی تحریک دی ہے۔

آئرش ڈپٹی وزیراعظم، وزیرِ خارجہ اور وزیرِ دفاع میخال مارٹن اس حوالہ سے اردن، مصر اور سعودی عرب کے وزرائے خارجہ کے ساتھ ساتھ سلووینیا، مالٹا اور بیلجیئم سمیت یورپی یونین کے ہم خیال ممالک کے ساتھ بھی بات چیت کرتے رہے ہیں۔

گزشتہ ماہ برسلز میں منعقد ہونے والے یورپی یونین کے سربراہی اجلاس میں سابق ائرش وزیراعظم ’’لیو وراڈکار‘‘ نے سپین، سلووینیا اور مالٹا کے وزرائے اعظم سے ملاقات کی تھی جس کے بعد انہوں نے بیان جاری کیا تھا کہ وہ فلسطین کو تسلیم کرنے کیلئے تیار ہیں۔

Read more

میاں نواز شریف! یہ ملک بہت بدل چکا ہے

مسلم لیگ ن کے لوگوں پر جب عتاب ٹوٹا تو وہ ’نیویں نیویں‘ ہو کر مزاحمت کے دور میں مفاہمت کا پرچم گیٹ نمبر 4 کے سامنے لہرانے لگے۔ بہت سوں نے وزارتیں سنبھالیں اور سلیوٹ کرنے ’بڑے گھر‘ پہنچ گئے۔ بہت سے لوگ کارکنوں کو کوٹ لکھپت جیل کے باہر مظاہروں سے چوری چھپے منع کرتے رہے۔ بہت سے لوگ مریم نواز کو لیڈر تسیلم کرنے سے منکر رہے اور نواز شریف کی بیٹی کے خلاف سازشوں میں مصروف رہے۔

Celebrity sufferings

Reham Khan details her explosive marriage with Imran Khan and the challenges she endured during this difficult time.

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
spot_img
Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments
error: