29.9 C
Islamabad
Sat, 1 October 2022

⁨تعلیم و تربیت کے ساتھ شخصیت کا ہونا ہر ایک کی ضرورت ہے!⁩

تھرسڈے ٹائمز نیوز لیٹر کو سبسکرائب کیجئے

خبریں اور اداریے براہ راست سب سے پہلے اپنی ای میل میں حاصل کریں۔

Your information will be processed in accordance with our data use policy
- Advertisement -

+ other posts

Want to contribute to The Thursday Times? Get in touch with our submissions team! Email views@thursdaytimes.com

تجربہ کاروں اور پریکٹیشنرز کے ساتھ تعلیم اور تربیت انسانوں کو خوش کرتی ہے۔ تعلیم علم اور عقل کو بڑھاتی ہے، اور جب بات افراد کی ہو تو علم ایک جامع زندگی گزارنے کے لیے ناگزیر ہے۔ اس دنیا میں بچہ جب آنکھ کھولتا ہے تو وہ مقدس، معصوم اور جاہل ہوتا ہے، اسی لیے کہا جاتا ہے کہ بچہ خدا کا روپ ہے۔ بچہ جھوٹ، فریب، فریب، بددیانتی، ظلم، لالچ، بے ایمانی اور منافقت سے کوسوں دور ہوتا ہے اور فریب اس کے ذہن میں نہیں ہوتا۔ تمام جرائم ہاتھ کے لیے چلتے ہیں؛ بچہ سچ بولتا ہے، ان میں تقریباً کوئی چیز مشترک نہیں ہے۔ تو وہ اتنا عظیم کیوں پیدا ہوا ہے کہ اس کے دکھوں کے بارے میں سوچنے سے درد اور تکلیف ہوتی ہے؟ واقعی! ناخوشگوار عادات اور انداز والدین یا بزرگوں سے مل سکتے ہیں جو ان کے خون میں شامل ہیں۔ کچھ خداداد صلاحیتیں ہوتی ہیں لیکن تربیت کا بھی شخصیت سازی میں اتنا ہی اہم کردار ہوتا ہے۔ تمام علم اور حکمت جو ہمیں تعلیم سے حاصل ہوتی ہے وہ والدین کی تربیت کا کردار ہے۔ بچے کی شخصیت کی تشکیل میں خاص طور پر ماں کا کردار بہت اہم ہوتا ہے، یہی وجہ ہے کہ ماں اپنے بچے کی پہلی اولاد ہوتی ہے۔ وہ صرف یہ کر سکتی ہے کہ وہ ماں کو اپنی زبان پھینکنے یا اپنی زبان بولنے میں مدد کرے۔ والدین وہ پہلے اساتذہ ہیں جو مصنوعات کو متعارف کرانے، جانچنے اور بتانے والے ہیں۔ والدین کو ہمیشہ اس بات سے آگاہ رہنا چاہیے کہ وہ (بچہ) کیا کرتے ہیں۔ کیا آپ چاہتے ہیں؟ آخر کیوں تم اور اس سلسلے میں کیا بہتر ہے؟ بچے کی بہت تعریف کرنا، بہت پیسہ کمانا، اکیلے آزاد رہنا، اپنے دوستوں کو ترک کرنا یا تھوڑی دیر میں ہر بار تنقید کرنا، دوستوں اور دوسرے گھر والوں اور دوستوں سے بات کرنا، رشتہ داروں کی تذلیل کرنا۔ اپنے نفس کا احترام کرنا۔خشک کرنا، ہر وقت پوچھنا، گویا کاٹھی میں کھڑا ہونا، یہ سب انفرادی طور پر خطرناک ہونے کے لیے بنائے گئے ہیں، جس میں کوئی توازن اور تناسب نہیں، اور کسی بھی صورت میں مصائب و آلام کو جنم نہیں دیتے۔ والدین برے اور پورے معاشرے کے لیے نقصان دہ ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ والدین اور اساتذہ معاشرے کے ذمہ دار افراد ہوتے ہیں، جن کے ہاتھ میں معاشرے اور ملک کا کردار نہ صرف والدین اور اساتذہ کے ہاتھ میں ہوتا ہے بلکہ وہ خاندان بھی جو اپنے بچوں سے جڑے ہوتے ہیں۔

بچہ مٹی کا پنجہ ہے، آپ جو بھی شکل بنائیں گے وہ ہو گا۔ اگر والدین مذہب، اخلاق اور قانون سے بالاتر ہوں تو بچوں کی کیا تربیت ہوگی؟ اولاد کے سامنے شوہر آپس میں بحث کریں گے، آپس میں گپ شپ کریں گے اور الزامات یا عیب نکالیں گے، اولاد کے خیالات کیا ہوں گے اور وہ کیا تربیت لے گا؟ بچوں کے والدین اپنے بچوں کے لیے رول ماڈل ہوتے ہیں۔ بچوں میں اعتماد اور محبت ہوتی ہے، بچہ انہیں خوش دیکھنا چاہتا ہے، اس سے آگے کی دنیا دیکھنا چاہتا ہے۔ جب والدین کا رویہ اتنا اچھا یا اچھا نہ ہو جتنا کہ والدین کا اعتماد، بچے کی شخصیت غیر متناسب ہوتی ہے۔ بچہ عدم اعتماد اور کلاس روم میں جذب ہوتا ہے۔ ایک بچہ باپ یا خالہ، خالہ یا دوستوں سے سگریٹ نوشی کر سکتا ہے۔ یہ احساس سے محروم کرنے کا ایک غیر معمولی کام کرتا ہے۔ انسان کا احساس یا برتری اور تنہائی یا تو انسان سے بنتی ہے یا ہیرو۔ بچے میں رہنمائی کی ضرورت ہوتی ہے، یہ کتابوں میں، بڑوں کی رہنمائی اور بڑے لوگوں کے تجربات اور ان کی تحریروں سے ملتی ہے، لیکن یہاں وہم یہ ہے کہ اکثر والدین بچوں کی بجائے بچوں میں مصروف رہتے ہیں۔ موبائل فون دے دیتے ہیں جس کی وجہ سے بچہ جسمانی اور ذہنی طور پر مفلوج ہو جاتا ہے۔ ایلیٹ کلاسکس کے بچے ایلیٹ کلاس کے بچوں کو کمپیوٹر اور پلے سٹیشن پر لے جاتے ہیں، اور اس میں مختلف گیمز ہیں جو مہنگی ہیں، اس کے ساتھ ساتھ خطرناک گیمز بھی ہیں، جو بچوں کو بے چین اور ضدی بھی بنا دیتے ہیں۔اس طرح ان کا دماغ ہر وقت کام کرتا رہتا ہے، اور بچے مر جاتے ہیں. جیسا کہ والدین کا اپنی اولاد پر فرض ہے، اسی طرح اولاد کی ذمہ داری بھی والدین پر عائد ہوتی ہے، جس میں اولاد کو بہترین تعلیم دینا، تعلیم دینا، دنیا کو سمجھنا اور دنیا کو سمجھنا، اچھے تعلقات کو سمجھنا شامل ہے۔ چونکہ بچے مستقبل کے معمار ہیں، اس لیے معاشرے کی بنیاد اور بچوں کی پرورش کا پیشہ دوسرے لفظوں میں تدریسی تربیت ہے۔

اس لیے اسلام کے خاندان کے تصور کی حدود سے بھی آگاہ کیا ہے۔ والدین کو شفقت کے ساتھ اپنی اولاد کی بنیادی اور جائز ضروریات کو پورا کرنا ہوتا ہے، جب تک وہ جوان ہوں۔ اس کے علاوہ ہر بچے کے مشورے کا جواب اس کی سمجھ اور سوچ کے مطابق دیا جائے گا اور بچہ احتیاط سے کام کا جواب دینے کی کوشش کرے گا، اس طرح اس کا اطمینان ضروری ہے، بچے کو اس کے انعام کے لیے آمادہ کرنا۔ اسے یہ احساس نہ دلائیں کہ یہ ایک فرض ہے، بچے کو صرف حکم نہیں دینا، بچے کو دوستانہ اور مددگار بنائیں، اس کی حوصلہ افزائی کریں اور معاون بنیں، زندگی کے ہر موڑ پر اس کی بات سنیں، اسے آسان ہدایات دیں، آپ کو براہ راست تاثر نہیں ملے گا کہ باہر کی دنیا خراب سڑکیں دکھائے گی، بچے کو الجھائیں یا الجھن کو کم نہ کریں۔ آپ کے ایماندارانہ رویے بچے کو یقین دلاتے ہیں، بچہ ہر وقت آپ کے ساتھ نہیں رہ سکتا، یہ باہر کی دنیا کو مروا سکتا ہے، خوفزدہ اور بُرا آج کل کے بچوں میں جرائم، بدسلوکی اور بے ایمانی کو جنم دے رہا ہے، بجائے اس کے کہ والدین سے اولاد پیدا ہو، والدین بچوں کو بہت زیادہ پیسہ اور آسائشیں دیتے ہیں بچوں کو بہتر اور انسان اور انسان محسوس کرتے ہیں وہ کہاں ہیں؟ بچے زیادہ سے زیادہ اطمینان حاصل کرنے کی کوشش میں نشے اور بری عادتوں کے عادی ہو جاتے ہیں اور پھر غربت، فاقہ کشی کا شکار ہو جاتے ہیں۔


The contributor, Sajid Ali, has an ADE.

He can be reached @QaisManik.

- Advertisement -

LEAVE A REPLY

Please enter your comment!
Please enter your name here
This site is protected by reCAPTCHA and the Google Privacy Policy and Terms of Service apply.

RELATED ARTICLES

FRESH OFF THE PRESS

ٹرمپ کے گھر چھاپہ کی طرز پر بنی گالہ پر بھی چھاپہ مار کر سائفر برآمد کیا جائے، مریم نواز

جن لوگوں نے عمران خان کے کہنے پر ایبسلیوٹلی ناٹ کے اسٹیکرز لگائے ہوئے تھے انہیں اب عمران خان سے پوچھنا چاہیے اب ان اسٹیکرز کا کیا کرنا ہے

ملک ایک ناہنجار، نااہل اورغدار کے ہاتھوں گروی رکھا گیا، مریم نواز

ن لیگی نائب صدر نے مزید لکھا کہ اگر آج ہر طرح کا سنگین جرم ثابت ہونے کے بعد بھی اس غدار عمران کو عبرت کا نشان نہیں بنایا جاتا تو پھر ملک کی تباہی کا ذمہ دار ہم سب کو سمجھا جائے گا۔

اسحاق ڈار کی واپسی

سینیٹر اسحاق ڈار کی فوری ملک واپسی ہورہی ہے اور وہ آئیندہ چند دنوں میں ملک کے نئے وزیرخزانہ کا حلف اٹھانے جارہے ہیں۔

نظام کی تبدیلی یا سوچ کی تبدیلی

ہم پچھتر سال کے سود و خسارے کا حساب لگانے بیٹھیں تو خسارے کا تناسب سود سے زیادہ ہی ہو گا اور بتدریج یہ خسارہ بڑھتا ہی چلا جا رہا ہے۔

سیلاب، دہشتگردی، اسلاموفوبیا، بھارتی مسلمانوں پر ظلم، شہباز شریف کا اقوام متحدہ میں خطاب

وزیراعظم شہباز شریف نے اقوام متحدہ جنرل اسمبلی سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ میں یہاں پر پاکستان پر آئی اس بڑی آفت بارے خود آپ کو بتانے آیا ہوں جس آفت کی وجہ سے پاکستان ایک تہائی پانی کے نیچے ہے۔

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

ہم نازک دور سے گزر رہے ہیں

جب سے ہوش سنبھالا ہے ہمیشہ یہی سنا ہے کہ "پاکستان تاریخ کے نازک ترین دور سے گزر رہا ہے۔" پھر جب پڑھنے پڑھانے سے واسطہ پڑا تو پتہ چلا کہ ہمارے والدین نے بھی ایسے ہی دور میں ہوش سنبھالا تھا جب "پاکستان تاریخ کے نازک ترین دور سے گزر رہا تھا۔"

مہنگائی کا جن بوتل میں بند کیا جاسکتا ہے، اسحاق ڈار

مسلم لیگ ن کے رہنما سابق وزیرخزانہ سینیٹر اسحاق ڈار کا کہنا ہے کہ بجائےاسکے ہمارا سارا فوکس معیشت مہنگائی پر ہو ہم ایکسٹینشن جیسی چیزوں میں الجھے ہوئے ہیں جس پر اتنا وقت صرف کرنے کی ضرورت ہی نہیں ہے کہ ایکسٹینشن دینی ہے نہیں دینی مانگی جائیگی یا نہیں یہ ساری ذمہ داری حکومت کی ہے جب وقت آئیگا حکومت فیصلہ کر لے گی

لز ٹرس برطانیہ کی تیسری خاتون وزیراعظم بننے جارہی ہیں

لزٹرس نے برطانوی ٹوری جماعت کی قیادت کا مقابلہ جیت لیا ہے اور وہ اب ٹوری پارٹی کی نئی رہنما اور اگلی برطانوی وزیراعظم ہونگی لز ٹرس نے ٹوری پارٹی کی قیادت کیلئے رشی سوناک کو شکست دے دی ہے۔

آئی ایم ایف رپورٹ تحریک انصاف حکومت کیخلاف کھلی چارج شیٹ ہے، اسحاق ڈار

پاکستان کی تاریخ میں میں آئی ایم ایف کا پروگرام صرف ایک مرتبہ کامیابی سے مکمل ہوا جو میاں نواز شریف کی آخری حکومت میں بطور وزیرخزانہ اسحاق ڈار نے کیا تھا