spot_img

Columns

Columns

News

پاک فوج نے جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف انکوائری کا آغاز کر دیا

پاک فوج نے سابق ڈائریکٹر جنرل آئی ایس آئی جنرل (ر) فیض حمید کے خلاف نجی ہاوسنگ سوسائٹی کے مالک کی درخواست پر انکوائری کا آغاز کر دیا ہے، جنرل (ر) فیض حمید پر الزام ہے کہ انہوں نے نجی ہاؤسنگ سوسائٹی کے خلاف دورانِ ملازمت اپنے اختیارات کا ناجائز استعمال کیا تھا۔

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، شیر افضل مروت

عمران خان کی حکومت سعودی عرب نے گِرائی تھی، سعودی عرب اور امریکہ دو ممالک تھے جن کے تعاون سے رجیم چینج آپریشن مکمل ہوا، سعودی عرب کی جانب سے پاکستان کیلئے معاشی تعاون بھی اسی پلاننگ کا حصہ ہے۔راہنما تحریکِ انصاف شیر افضل مروت

فیض آباد دھرنا کمیشن ایک مذاق تھا، اس کمیشن کی کوئی وقعت نہیں ہے۔ وزیرِ دفاع خواجہ آصف

جنرل (ر) باجوہ نے مجھے دھمکی دی ہے کہ میں نے باتیں بیان کیں تو ٹانگوں پر کھڑا نہ ہو سکوں گا، جنرل (ر) باجوہ اور جنرل (ر) فیض حمید فیض آباد دھرنا کمیشن میں پیش نہیں ہوئے، فیض آباد دھرنا کمیشن ایک مذاق تھا، اس کمیشن کی کوئی وقعت نہیں ہے۔

سعودی عرب پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا، سعودی وزیرِ خارجہ شہزادہ فیصل

سعودی عرب پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے اپنا کردار ادا کرے گا، جلد سرمایہ کاری میں پیش رفت ہو گی۔ سعودی وزیرِ خارجہسعودی عرب کی جانب سے بڑی سرمایہ کاری کا خیر مقدم کرتے ہیں، سعودی سرمایہ کاروں کو تمام سہولیات فراہم کی جائیں گی۔ وزیرِ خارجہ اسحاق ڈار

جنرل (ر) باجوہ میرے خلاف ہیروئن کے جعلی کیس میں براہِ راست ملوث تھا، رانا ثناء اللّٰہ

میرے خلاف ہیروئن کے جعلی کیس میں جنرل (ر) قمر جاوید باجوہ براہِ راست ملوث تھا، عمران خان نے پارلیمنٹ کی منظوری کے بغیر اگست میں ہی جنرل (ر) باجوہ کو توسیع دے دی تھی، میاں نواز شریف نے کہا کہ اب محاذ آرائی بےسود ہے۔
Op-Edکہاں کی سیاست؟
spot_img

کہاں کی سیاست؟

عمران خان نے تحریکِ عدم اعتماد سے بچنے کیلئے آرمی چیف قمر جاوید باجوہ کو تاحیات ایکسٹینشن آفر کی، وہاں بات نہ بن تو سکی موصوف نے امریکی سازش کا ڈرامہ رچا کر ریاست کے آئین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے تحریکِ عدم اعتماد کو مسترد قرار دلوانے اور آرمی چیف کو بھی فارغ کرنے کی کوشش کی۔

A.M. Farooqi
A.M. Farooqi
A.M. Farooqi is a Staff Reporter for The Thursday Times.
spot_img

عمران خان نے تحریکِ عدم اعتماد سے بچنے کیلئے آرمی چیف قمر جاوید باجوہ کو تاحیات ایکسٹینشن آفر کی، وہاں بات نہ بن تو سکی موصوف نے امریکی سازش کا ڈرامہ رچا کر ریاست کے آئین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے تحریکِ عدم اعتماد کو مسترد قرار دلوانے اور آرمی چیف کو بھی فارغ کرنے کی کوشش کی۔

نتیجتاً مبینہ طور پر آدھی رات کو وزیراعظم ہاؤس سے نکالا گیا۔ دو چار دن خاموشی اختیار کی اور پھر قومی اسمبلی سے استعفوں کا اعلان کر کے جلسوں میں غدار، امریکی غلام، میر جعفر و میر صادق، نیوٹرل، جانور، مسٹر ایکس، مسٹر وائے اور مسٹر زیڈ جیسی باتیں شروع کر دیں۔

اور اس فتنہ و فساد کیلئے مذہب کا بھی استعمال کیا، حتیٰ کہ قرآنی آیات اور احادیثِ نبویﷺ تک کو ذاتی مفادات کے حصول کیلئے غلط انداز میں پیش کیا۔ جب امریکی خط اور سازش والے جھوٹ بار بار ایکسپوز ہوئے تو پھر عمران خان نے خود ہی اس ملک دشمن بیانیہ سے دستبردار ہونے کا اعلان کر دیا۔

ممنوعہ فارن فنڈنگ اور توشہ خانہ واردات سامنے آئیں اور دونوں لانگ مارچ فلاپ ہوئے تو مظلوم بننے کیلئے لانگ مارچ کے دوران فائرنگ ڈرامہ رچا کر ہمدردیاں سمیٹنے کی کوشش کی۔ کسی بھی طرح اپنی دال گلتی ہوئی نظر نہ آئی تو بغاوت کا علم بلند کرتے ہوئے پنجاب اور خیبرپختونخوا کی اسمبلیاں توڑنے کا اعلان کر دیا۔

ڈیڑھ دو ماہ کی تگ و دو کے بعد پنجاب اسمبلی تحلیل کی تو آگے بڑھنے کی بجائے ایک بار پھر قومی اسمبلی میں واپس آنے کا فیصلہ سنا دیا۔ اس یوٹرن کے جواب میں موصوف کو 35 ارکان کے استعفے منظور کر کے سرپرائز بھی دیا جا چکا ہے۔ اپنا ہر تھوکا چاٹنے اور ہر بات پر یوٹرن کی عادتیں تو عمران خان کی سرشت میں شامل ہیں اور ان حرکتوں نے اس منتشر مزاج شخص کو ہر بار ذلیل و رسوا کروایا۔

حکومت سے نکلنے کے بعد سیاسی میدان میں پے در پے شکست ہوئی تو عوامی مقبولیت کا شور برپا کیا مگر اب سندھ کے بلدیاتی انتخابات نے اس بھرم کو بھی چکنا چور کر دیا۔ فرقہ تحریکِ انصاف کے پیروکار اگر اس ذلالت بھری زندگی کو سیاست کہتے ہیں تو پھر یقیناً انہیں سیاست کا مفہوم معلوم نہیں۔

عمرانی فتنہ کے ڈسے ہوئے مریض اگر ایسے شکست خوردہ شخص کو سیاست کا سلطان سمجھتے ہیں تو پھر یقیناً انہیں علاج اور اخلاقی تربیت کی اشد ضرورت ہے۔ عمران خان کبھی بھی سیاستدان نہیں رہا اور یقیناً اپنی اس روش کے ساتھ کبھی سیاستدان بن ہی نہیں سکتا، وہ سیاست میں صرف ایک چھاتا بردار گھس بیٹھیا ہے۔

سیاست رواداری، برداشت، حوصلہ، صبر، حکمتِ عملی، دور اندیشی اور حب الوطنی کے ساتھ دستور کی مقرر کردہ حدود میں رہ کر ملک و قوم کی بھلائی کیلئے ہونی چاہیے۔ سازشیں رچانے، جھوٹ بولنے، لوگوں کو گمراہ کرنے، قوم کو تقسیم کرنے اور خانہ جنگی کو ہوا دینے کا نام سیاست نہیں بلکہ منافقت ہے۔

Subscribe
Notify of
guest
0 Comments
Inline Feedbacks
View all comments

Read more

نواز شریف کو سی پیک بنانے کے جرم کی سزا دی گئی

نواز شریف کو ایوانِ اقتدار سے بے دخل کرنے میں اس وقت کی اسٹیبلشمنٹ بھرپور طریقے سے شامل تھی۔ تاریخی شواہد منصہ شہود پر ہیں کہ عمران خان کو برسرِ اقتدار لانے کے لیے جنرل باجوہ اور جنرل فیض حمید نے اہم کردارادا کیا۔

ثاقب نثار کے جرائم

Saqib Nisar, the former Chief Justice of Pakistan, is the "worst judge in Pakistan's history," writes Hammad Hassan.

عمران خان کا ایجنڈا

ہم یہ نہیں چاہتے کہ ملک میں افراتفری انتشار پھیلے مگر عمران خان تمام حدیں کراس کر رہے ہیں۔

لوٹ کے بدھو گھر کو آ رہے ہیں

آستین میں بت چھپائے ان صاحب کو قوم کے حقیقی منتخب نمائندوں نے ان کا زہر نکال کر آئینی طریقے سے حکومت سے نو دو گیارہ کیا تو یہ قوم اور اداروں کی آستین کا سانپ بن گئے اور آٹھ آٹھ آنسو روتے ہوئے ہر کسی پر تین حرف بھیجنے لگے۔

حسن نثار! جواب حاضر ہے

Hammad Hassan pens an open letter to Hassan Nisar, relaying his gripes with the controversial journalist.

#JusticeForWomen

In this essay, Reham Khan discusses the overbearing patriarchal systems which plague modern societies.
error: